نیشنل اسمبلی میں 10 اعلان کردہ اربابیاں ہیں: ای سی پی

نیشنل اسمبلی کے 342 ارکان میں سے 10 کے طور پر اعلان کیا ہے کہ انھوں نے منگل کو انتخابی کمیشن آف پاکستان کی طرف سے جاری 2008 کے لئے ایم این اے کے زیر اہتمام اثاثوں کی ایک بیان کے مطابق، ایک ارب روپے سے زائد مالیت کا مالک ہے.

ان میں حکمرانی پاکستان تحریک انصاف کے چار ارکان شامل ہیں، ان دونوں کے اتحادی پاکستان مسلم لیگ قائداعظم دونوں نے چودھریوں کے چوہدریوں کے فرزند، دونوں مسلم لیگ ن کے نائب اور پاکستان پیپلز پارٹی اور امی قومی نیشنل پارٹی میں سے ایک ہیں.

بہاول نگر کے مسلم لیگ ن این این اے احسان احسان باجوہ کے بیان کے مطابق، قانون سازوں کے درمیان امیر ترین امیدوار ہے جو متحدہ عرب امارات میں 1.1 بلین روپے کی ذمہ داریوں کو چھوڑ کر 3 ارب روپے سے زائد مالیت ہے. اس کے پاس 56.4 ملین روپے درہم، نو گھروں اور متحدہ عرب امارات میں ایک عمارت کی بڑی کاروباری سرمایہ ہے. پاکستان میں ان کی زرعی جائیداد کی قیمت 249.5 ملین ہے. انہوں نے کاروباری اور رہائشی خصوصیات بھی حاصل کیے ہیں جو 92.5 ملین روپے کی ادائیگی کرتے ہیں.

این اے 28 (پی پی آئی) کے پی ٹی آئی ایم آر ارباب عمر امیر ایوب، اثاثوں کا مالک ہے جس کی قیمت 2.56 بلین روپے سے زیادہ ہے. انہوں نے 28 ارب مالیتوں اور پولٹری فارموں میں 2.41 بلین روپوں کا مالک بنادیا ہے اور سات بینک اکاؤنٹس میں 12.49 ملین روپے رکھے ہیں.

سابق وزیر اعظم چوہدری شجاعت حسین کے بیٹے مسلم لیگ (ن) کے چوہدری سلمان حسین نے بھی اس فہرست پر ہے، اس کے اثاثوں کے مطابق 1.60 بلین روپے. انہوں نے مختلف صنعتی گروپوں میں لاکھوں حصص اور 410 ملین روپے بینک اکاؤنٹ میں رکھے ہیں.

قومی اسمبلی کے اسپیکر چوہدری پرویز الاہی کے نائب -69 (گجرات) چاندیس الہی سے مسلم لیگ (ن) کے ایم این اے، 1.43 بلین روپے کی اثاثوں کا مالک ہے. قومی اسمبلی میں دیگر اربابیں، ڈیرہ اسماعیل خان سے تحریک انصاف کے رکن محمد یعقوب شیخ؛ امیر حیدر اعظم خان ہاٹ، این این 21 (مردانو) سے اے این اے این اے؛ این این 169 (بہاول نگر) کے مسلم لیگ ن کے قانون ساز نورال حسن تنویر؛ اور وزیر اعظم کے وزیر عمر ایوب، این اے 17 (ہار پور) سے تحریک انصاف.

ثاقب شیخ۔