کچھ دنوں تک پنجاب میں اپنی حکومت بنائیں گے، ن لیگی رہنماؤں کا دعوی

چوہدری پرویز الٰہی کو ڈی سیٹ کیا جائے

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے رہنماؤں نے دعویٰ کیا ہے کہ پارٹی صوبے میں دوبارہ حکومت بنائے گی اور پنجاب کے وزیر اعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی کو ڈی سیٹ کیا جائے گا۔ 

 لاہور کی سیشن عدالت میں پیشی کے بعد وزیراعظم کے معاون خصوصی عطا اللہ تارڑ نے کہا کہ مرکز کے خلاف بیانات کے لیے پنجاب حکومت کے وسائل استعمال کیے گئے۔ جبکہ انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب کی بیوروکریسی بھی ان کے ساتھ کام کرنے کو تیار نہیں۔ 

توشن خانہ کیس میں تفتیش

کیس کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ کیس بے بنیاد اور جھوٹا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم پولیس کے پاس جاتے ہوئے خود تحقیقات میں شامل ہوئے ہیں۔ دوسری طرف ایک شخص ہے جو توشن خانہ کیس میں تفتیش میں شامل نہیں ہو رہا ہے۔ وہ ضمانت قبل از گرفتاری کے پیچھے چھپا ہوا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ اس معاملے میں شکست ہو گی. انہوں نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کو بھی تحقیقات میں شامل ہونے کا مشورہ دیا۔

عطا تارڑ نے مزید کہا کہ پنجاب میں وزیراعلیٰ الٰہی اور ان کے بیٹے مونس الٰہی عمران خان کو تحفظ دے رہے ہیں، صوبے کے وسائل فوج اور عدلیہ کے خلاف استعمال ہوتے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ عمران خان کے جلسوں میں بھی تعداد کم ہو رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | آرمی چیف کی ایکسٹینشن متعلق کوئی بات نہیں کی، عمران خان

یہ بھی پڑھیں | عمران خان کی دہشت گردی کے مقدمے میں 20 ستمبر تک ضمانت منظور

وزیراعلیٰ پنجاب پر الزام عائد

 اس موقع پر مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا مشہود نے وزیراعلیٰ پنجاب پر الزام عائد کیا کہ وہ سیلاب متاثرین اور اپنے لوگوں پر پیسہ خرچ کرنا بھول گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ صوبہ سب کی مدد کرتا تھا اور اب اس صوبے کے لوگوں کو نظر انداز کر دیا گیا ہے۔ پنجاب میں آٹے کی قیمت ہماری طرح سستی ہونی چاہیے۔ 

 رانا مشہود نے دعویٰ کیا کہ 15 سے زائد حکومتی ایم پی اے مسلم لیگ ن سے رابطے میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پنجاب نے سیلاب متاثرین کی فکر کرنا چھوڑ دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ کمپنی زیادہ عرصے تک نہیں چلے گی۔ 

اسمبلی میں توڑ پھوڑ کیس کی سماعت

 اس سے قبل سیشن عدالت میں پنجاب اسمبلی میں توڑ پھوڑ کیس کی سماعت ہوئی جس میں عدالت نے عطا تارڑ سمیت مسلم لیگ ن کے 11 رہنماؤں کو تحقیقات میں شامل ہونے کا حکم دیا۔ 

 عدالت نے مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کی ضمانت قبل از گرفتاری میں 19 ستمبر تک توسیع کرتے ہوئے پولیس کو آئندہ سماعت پر تفتیش کا ریکارڈ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔