کراچی میں ڈینگی وائرس سے ہسپتال بھر گئے

ڈینگی وائرس کیسز سے ہسپتال بھر گئے

ڈینگی وائرس نے شہر کراچی کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے اور اب روزانہ سینکڑوں اور ہزاروں مریض سرکاری اور نجی ہسپتالوں کے ساتھ ساتھ جنرل پریکٹیشنرز کو رپورٹ کر رہے ہیں گویابکراچی میں ڈینگی وائرس کیسز سے ہسپتال بھر گئے ہیں۔

 مختلف ذرائع سے اکٹھی کی گئی معلومات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ اس وقت نجی اور سرکاری دونوں ہسپتالوں میں ڈینگی کے مریضوں کی بڑی تعداد داخل ہے جبکہ باہر کے مریضوں کے محکموں اور پرائیویٹ کلینکس میں رپورٹ کرنے والے لوگوں کی اکثریت فلو جیسی علامات اور علامات کے ساتھ تشخیص کر رہی ہے۔ 

 ذرائع کے مطابق شہر کے 5 بڑے اسپتالوں میں رواں سال ڈینگی کی وبا پھیلنے کے بعد سے کوئی موت نہیں ہوئی ہے۔

سندھ انفیکشن ڈیزیز ہسپتال اور ریسرچ سینٹر

 یہ ہسپتال ہیں: سندھ انفیکشن ڈیزیز ہسپتال اور ریسرچ سینٹر، ڈاؤ یونیورسٹی ہسپتال، ڈاکٹر روتھ فاؤ سول ہسپتال کراچی، نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ اور جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سینٹر۔

یہ بھی پڑھیں | بنوں، پشاور، لاہور اور سوات میں پولیووائرس موجود

یہ بھی پڑھیں | پچھلے 6 ہفتوں میں ڈینگی سے کراچی میں 30 اموات

ذرائع نے بتایا کہ آغا خان یونیورسٹی ہسپتال میں گزشتہ چھ ہفتوں میں سب سے زیادہ اموات (11) ہوئی ہیں اس کے بعد لیاقت نیشنل ہسپتال (LNH) میں تین اموات ہوئی ہیں (مئی اور 9 ستمبر کے درمیان رپورٹ ہوئی ہے)۔ 

 مئی سے اب تک ایل این ایچ میں کل 1,034 مریض صحت یاب ہو چکے ہیں۔ ہسپتال کے اہلکار انجم رضوی نے بتایا کہ صرف تین ہلاکتیں ہوئیں جب کہ کئی مریض اب بھی زیر علاج ہیں۔ 

مریضوں کو ہسپتال میں تشویشناک حالت میں لایا گیا

 انہوں نے مزید کہا کہ مرنے والے تین مریضوں کو ہسپتال میں تشویشناک حالت میں لایا گیا تھا۔ 

 ڈاؤ ہسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ (ایم ایس) ڈاکٹر زاہد اعظم نے کہا کہ اگرچہ ڈینگی کے مریض بڑی تعداد میں رپورٹ کر رہے ہیں لیکن ابھی تک ہسپتال میں کوئی اموات نہیں ہوئی۔ 

 انہوں نے بتایا کہ ہم روزانہ 40 سے 50 مریض داخل کر رہے ہیں جن میں سے آٹھ کو انتہائی نگہداشت کے یونٹ [آئی سی یو] میں داخل کیا جاتا ہے جبکہ باقی ایک یا دو دن میں ڈسچارج ہو جاتے ہیں اور ان کیسز کو کلینک میں فالو کیا جاتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔