مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

کراچی: اگلی کلاس میں پروموٹ نا کئے جانے پر طالب علم کی خودکشی

کراچی میں ایک نوجوان طالب علم کی نعش بلدیہ ٹاؤن کی قائمخانی کالونی میں واقع ایک گھر سے ملی ہے۔ 

پولیس کے مطابق ، اس نوعمر نوجوان کا نام اویس ہے جس کی عمر 15 سالہ ہے۔ پولیس تفصیلات کے مطابق، اویس نے خود کو پھانسی دے کر خودکشی کی ہے۔ 

پولیس کا کہنا ہے کہ متوفی ، آٹھویں جماعت کا طالب علم ، اگلی کلاس میں پروموٹ ہونا چاہتا تھا لیکن اس کے والدین نے اسے پڑھائی میں کمزور ہونے کی وجہ سے اگلی کلاس میں بٹھانے سے انکار کیا تھا۔

 انہوں نے مزید کہا کہ اس کے بعد سے وہ بہت ذہنی دباؤ میں تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ جب اس نے خودکشی کی اس لڑکے کے والدین گھر پر موجود نہیں تھے۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان جنرل اسمبلی اقوام متحدہ میں فلسطین کا مسئلہ اٹھائے گا      

والدین کی درخواست پر نعش پوسٹ مارٹم کے بغیر لواحقین کے حوالے کردی گئی ہے۔

یاد رہے کہ اس ماہ کے شروع میں ، غلام محمد مہر میڈیکل کالج کے ایم بی بی ایس کے آخری سال کے طالب علم نے مبینہ طور پر سکھر میں امتحان میں ناکامی کے بعد خودکشی کرلی تھی۔ 

میڈیکل کالج میں آخری سال کے طالب علم طارق نے مبینہ طور پر ڈگری میں ناکامی کے بعد خودکشی کرلی تھی۔ اس نے ایک خودکش نوٹ بھی چھوڑا تھا جس میں اس نے اپنی والدہ سے محبت کا اظہار کیا اور اس کی اس حرکت کے پیچھے کی وجوہات بیان کیں۔

 ان کے بھائی راجہ غضنفر نے نجی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے خودکشی کرنے سے ایک روز قبل طارق سے ٹیلیفونک گفتگو کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ طارق بہت مایوس اور پریشان تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔