ڈالر کی اونچی اڑان، انٹربینک میں 227 روپیہ کا ہو گیا

جمعرات کو ڈالر کے مقابلے میں روپے کی گراوٹ کا سلسلہ جاری رہا ہے۔ ڈالر کی اونچی اڑان جاری ہے اور مقامی کرنسی انٹربینک مارکیٹ میں 227 روپے کی ریکارڈ نچلی سطح تک گر گئی ہے۔ دیکھنے والوں نے ان نقصانات کی وجہ سیاسی “افراتفری” اور گرین بیک کو قرار دیا جو کہ دیگر کرنسیوں کے مقابلے میں بھی مضبوط ہو رہا ہے۔

بدھ کو روپیہ 224.92 روپے پر بند ہوا تھا

 فارن ایکسچینج ایسوسی ایشن آف پاکستان (ایف اے پی) کے مطابق، آج جب سیشن کا آغاز ہوا تو، صبح 10:57 بجے تک مقامی کرنسی کی قدر 2.08 سے 227 روپے تک گر گئی۔ 

سیاسی افراتفری

ایف اے پی کے چیئرپرسن ملک بوستان نے گزشتہ پانچ سیشنز میں روپے کی مسلسل گراوٹ کی وجہ “سیاسی افراتفری” اور بین الاقوامی مارکیٹ میں ڈالر کی قدر میں اضافے کو قرار دیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ملک میں سیاسی افراتفری نے سرمایہ کاروں کے اعتماد کو کم کر دیا ہے جس کی وجہ سے درآمد کنندگان پریشان تھے اور “غیر ضروری طور پر” مارکیٹ سے ڈالر خرید رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اس کے نتیجے میں انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی مانگ بڑھ رہی ہے۔ 

 انہوں نے وضاحت کی کہ اس کے علاوہ، گزشتہ ہفتے کے دوران برطانوی پاؤنڈ اور جاپانی ین سمیت 40 سے زائد کرنسیوں کے مقابلے ڈالر کی قدر میں اضافہ ہوا ہے جس نے مقامی مارکیٹ میں روپے کو متاثر کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان اسٹاک ایکسچینج کا منفی رجحان برقرار، دوسو پوائنٹس کی کمی  

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی اسٹاک مارکیٹ ایشیاء کی تیسری بدترین کارکردگی والی بن گئی  

 انہوں نے اسٹیٹ بینک آف پاکستان سے کہا کہ وہ ’’قیاس آرائیوں‘‘ میں ملوث بینکوں کے خلاف سخت کارروائی کرے تاکہ ڈالر کی قیمت میں ’’مصنوعی اضافہ‘‘ کو روکا جاسکے۔ ایف اے پی کی چیئرپرسن نے حکومت سے یہ بھی کہا کہ وہ قسط کے جلد اجراء کے لیے انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) سے بات چیت کرے تاکہ سرمایہ کاروں کا اعتماد بحال ہو سکے۔ 

مفتاح اسماعیل سے اسٹیک ہولڈرز کو گھیرے میں لانے کا مطالبہ

 دریں اثنا، عبداللہ ذکی، درآمد کنندہ اور کراچی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سابق صدر نے “گھبراہٹ کی خریداری” کو مورد الزام ٹھہرایا اور وزیر خزانہ سے مطالبہ کیا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ متفقہ روپے کی قدر سے متعلق شرائط پر اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ فوری طور پر تبادلہ خیال کریں.

 انہوں نے کہا کہ درآمد کنندگان اور برآمد کنندگان دونوں ہی مارکیٹ میں ڈالر کی کمی کی وجہ سے پریشان تھے۔ روپے کی قدر کو 240 تک لے جانے کے بارے میں مارکیٹ میں افواہیں گردش کر رہی ہیں جس سے خوف و ہراس پھیل رہا ہے۔ 

 وزیر خزانہ کو ان افواہوں کو مسترد کرنا چاہیے تاکہ مارکیٹ میں غیر یقینی صورتحال ختم ہو جائے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں