مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

چائنہ کا عالمی سطح پر مختلف سازشوں کے باوجود پاکستان سے جڑے رہنے کا اعلان

چینی وزیر خارجہ اور ریاستی مشیر وانگ یی نے بدھ کے روز عالمی سیاست میں تبدیلیوں اور سازشوں کے باوجود پاکستان کے ساتھ جڑے کا اعلان اور وعدہ کیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق انہوں نے یہ بیان پاک چین تعلقات کے 70 سال کی یاد میں پاک چین انسٹی ٹیوٹ (پی سی آئی) کے زیر اہتمام “پاک چین 70 سال پر ایک منفرد دو طرفہ شراکت” کے عنوان سے ایک کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے دیا۔

 کانفرنس میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی خطاب کیا جبکہ اس میں چین اور پاکستان کے سرکاری عہدیداروں ، ماہرین تعلیم ، صحافیوں ، طلباء اور سول سوسائٹی کے ممبروں نے شرکت کی۔ 

کانفرنس سے دونوں ممالک کے چوبیس پینلسٹوں نے پاک چین تعلقات کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے خطاب کیا۔

وانگ یی نے کہا کہ چین اور پاکستان ہر موسم کے دوست ہیں جو ایک مّتلف ثقافتوں کے باوجود ایک دوسرے کی ترجیحات کا احترام کرتے اور سمجھتے ہیں۔ وانگ یی نے دنیا کو کثیرالجہتی پر عمل کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ دنیا بھر کے ممالک کو مل کر کام کرنا چاہئے۔

 انہوں نے یہ بھی کہا کہ آگے بڑھتے ہوئے ، پاکستان اور چین کو بین الاقوامی امن کے تحفظ کے لئے ہاتھ ملانا چاہئے اور دیگر ممالک کو بھی علاقائی سلامتی کے خطرات کے خلاف ہاتھ ملانے کی ترغیب دینی چاہئے۔

یہ بھی پڑھیں | بینک آن لائن ٹرانسفروں کے معاملے پر قابو پائے گئے ہیں ، اسٹیٹ بینک ڈیپارٹمنٹ گورنمنٹ

 انہوں نے پاک چین دوستی کو فروغ دینے پر سینیٹر مشاہد حسین کا بھی شکریہ ادا کیا۔ شاہ محمود قریشی نے کورونا وائرس کے دوران چین کے تعاون پر چین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ بے مثال تعاون تھا۔

 انہوں نے کہا کہ چین نے اب تک پاکستان کو ویکسین کی 3.5 ملین خوراکیں عطیہ کی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے ہمیشہ چین کے بنیادی مفادات کی حمایت کی ہے۔ انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان تعلیمی تعاون کے بارے میں بھی بات کی ، جس سے ثقافتی تعاون کو بھی یقینی بنایا جائے گا۔ 

شاہ محمود قریشی نے پاکستان اور چین کے مابین 70 سالہ دوطرفہ تعلقات کی یاد میں متعدد تقریبات پر روشنی ڈالی اور خصوصی طور پر ماہرین کے ایک سرشار پینل کے ساتھ تقریب کا اہتمام کرنے پر پی سی آئی کا شکریہ ادا کیا۔

 پی سی آئی کے چیئرمین مشاہد حسین نے چینی حکومت کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ چین نے 800 ملین افراد کو غربت سے نکال کر دنیا کی آبادی کے ایک پانچواں حصہ کی تقدیر بدلی ہے۔ 

انہوں نے یہ بھی کہا کہ کس طرح بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو (بی آر آئی) نے مختلف براعظموں کے 140 ممالک کو رابطہ ، بندرگاہوں ، پائپ لائنوں ، معیشت اور توانائی کے ذریعے اکٹھا کیا ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔