چائنہ نے ٹرمپ کی ٹک ٹاک پابندی کو طاقت کا غلط استعمال قرار دے دیا

چین نے اپنے ایک حالیہ بیان میں کہا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ ٹک ٹاک پر پابندی لگانے کی کوشش کرکے “طاقت” کا غلط استعمال کررہی ہے کیونکہ امریکہ کی وفاقی عدالت نے بھی ٹرمپ انتظامیہ کو ایسے اقدامات کرنے سے فی الحال روک دیا ہے۔ 

امریکی حکومت نے چین کی ملکیت ایپ ٹک ٹاک کے نئے ڈاؤن لوڈ پر اتوار کی رات سے پابندی عائد کرنے کی ہے – جبکہ 12 نومبر کے بعد اس کے استعمال پر ببی پابندی لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دعوی کیا ہے کہ مقبول ایپ قومی سلامتی کے لئے خطرہ ہے اور بیجنگ کے لئے اپنی چینی آبائی کمپنی بائٹ ڈانس کے توسط سے ڈیٹا لیک کر رہی ہے۔ 

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ وین بین نے اس آرڈر کو “دھونس سلوک” قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ دوسرے ملکوں کے کاروباری اداروں کو بلاجواز دبانے کے لئے قومی طاقت کو غلط استعمال کرنے کا ثبوت ہے۔ اس نے مزید کہا کہ اس کے بجائے  امریکہ کو دنیا میں سرمایہ کاری اور ملک میں کام کرنے والی کمپنیوں کے لئے ایک منصفانہ ، انصاف پسند ، آزاد اور غیر امتیازی کاروباری ماحول مہیا کرنا چاہئے۔

چین کا کہنا ہے کہ ٹرمپ ایک مضبوط حریف کو 100 ملین امریکی صارفین کے ساتھ ایک منافع بخش ایپ کی مکمل ملکیت ترک کرنے کا کہہ رہا ہے۔ 

 امریکی وفاقی عدالت نے ٹرمپ کے اس حکم پر عارضی طور پر عمل نا کرنے کا حکم دیا ہے جس کی وجہ ٹک ٹاک کے وکلا ہیں جنہوں نے کہا کہ یہ سیکیورٹی کے حقیقی خدشات کے بجائے سیاست پر مبنی “سزا یافتہ” پابندی ہے۔   امریکی کمپنیوں نے بھی ٹک ٹاک پابندی پر تشویش کا اظہار کیا ہے کہ اس طرح تو آزاد انٹرنیٹ پر بھی پابندی لگائی جاسکتی ہے اور پھر چین کی وسیع منڈی میں کام کرنے والی امریکی کمپنیوں کے خلاف انتقامی کارروائیوں کے امکانات بھی موجود ہیں۔ 

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x