پی ڈی ایم کے اسلام آباد لانگ مارچ کا رخ راولپنڈی کی طرف بھی ہو سکتا ہے، فضل الرحمن

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ حزب اختلاف کی تحریک اب صرف وزیراعظم عمران خان کی زیرقیادت حکومت ہی نہیں بلکہ “ان کے حامیوں” کے ذریعہ بھی چلائی جائے گی اور اس سلسلے میں ہمارامارچ راولپنڈی بھی جا سکتا ہے۔ 

رائے ونڈ میں پی ڈی ایم رہنماؤں کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فضل الرحمن نے کہا کہ تفصیلی باتچیت کے بعد فیصلہ کیا گیا ہے کہ اپوزیشن آئندہ ضمنی انتخابات میں حصہ لے گی لیکن کہا کہ سینیٹ کے انتخابات میں حصہ لینے سےمتعلق کوئی فیصلہ نہیں ہوا ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ اصولی طور پر ہم کسی بھی ادارے کے انتخابات کے مخالف نہیں ہیں لیکن [سینیٹ انتخابات] تک کچھ وقت باقیرہتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے پی ڈی ایم کے آئندہ اجلاسوں میں حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔ 

جے یو آئی (ف) کے رہنما نے کہا کہ میڈیا پر پی ڈی ایم کے اندر تفریق کی خبریں ایک “مہم” کے تحت چلائی جارہی ہیں  لیکن آجیہ ساری افواہیں دم توڑ گئیں ہیں۔ پی ڈی ایم کے سربراہ نے مسلم لیگ ن کے نائب صدر مریم نواز سمیت پیپلز پارٹی کی چیئرپرسنبلاول بھٹو سمیت دیگر اعلی اپوزیشن رہنماؤں کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم پہلے کی نسبت زیادہ مضبوط ہو چکی ہےاور قوم اس ناجائز حکومت سے نجات دلانے کے لئے پہلے سے زیادہ پرعزم ہے۔

یہ بھی پڑھیں | چین نے پاکستان کو مالی اعانت ختم کرنے کے بارے میں ‘بے بنیاد’ خبروں کو مسترد کردیا

آصف علی زرداری نے کہا کہ پی ڈی ایم کی تمام حلقہ ساز پارٹیوں نے آج اجلاس کو اطلاع دی ہے کہ اتحاد کے ذریعہ اس مقصدکے لئے دی گئی 31 دسمبر کی تاریخ کے مطابق ، “تمام” اپوزیشن قانون سازوں کے استعفے ان کی پارٹی قیادت تک پہنچ گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ لہذا آج ایک ہدف حاصل کرلیا گیا ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ اگر وزیر اعظم نے 31 جنوری تک استعفی دینےسے انکار کردیا تو پی ڈی ایم قیادت اسلام آباد کے لانگ مارچ کااعلان اور اس کی تاریخ کا فیصلہ کرے گی۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x