پیٹرولیم ڈیلرز نے 18 جولائی کو احتجاج کی کال دے دی

پاکستان پیٹرولیم ڈیلرز ایسوسی ایشن (پی پی ڈی اے) نے جمعرات کو 18 جولائی کو ملک گیر ہڑتال کا اعلان کرتے ہوئے حکومت سے ڈسٹری بیوٹرز کے کمیشن میں اضافے کا مطالبہ کیا ہے۔

 نجی نیوز کے مطابق لاہور کے پیٹرول پمپس پر ڈیلرز کی ہڑتال اور مطالبات کے حوالے سے بینرز آویزاں کردیے گئے ہیں۔ پی پی ڈی اے کے جنرل سیکرٹری کے مطابق کم از کم اجرت 25 ہزار روپے کر دی گئی ہے۔ 

بجلی کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے

مزید برآں، بجلی کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے جبکہ لوڈ شیڈنگ کے اوقات میں اضافہ کر دیا گیا ہے جس کے نتیجے میں جنریٹر کے اخراجات بڑھ گئے ہیں۔ لہذا، پی پی ڈی اے نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ وعدے کے مطابق ان کا کمیشن 6 فیصد تک بڑھائے۔

 تقسیم کے عمل میں مزید رکاوٹ مون سون کی بارشیں ہیں، جس نے کراچی کے کیماڑی میں تیل کی تنصیب کے علاقے زیر آب آ گئے ہیں۔ نکاسی آب کا نظام نہ ہونے کی وجہ سے آئل ٹینکرز کی آمدورفت ٹھپ ہو کر رہ گئی ہے۔ 

 آل پاکستان آئل ٹینکرز اونرز ایسوسی ایشن (اے پی او ٹی او اے) کے چیئرمین میر شمس شاہوانی کے مطابق کراچی میں کیماڑی، کورنگی اور پورٹ قاسم آئل تنصیب کے علاقوں میں بارش کا پانی کھڑا ہے۔ اطلاعات کے مطابق، کم از کم 6,000 آئل ٹینکرز بھرنے کے منتظر ہیں، کیونکہ 21 ایندھن درآمد کرنے والی کمپنیوں کے آئل ٹرمینلز میں بارش کا پانی جمع ہے۔ 

اتوار 10 جولائی کے بعد سے کوئی آئل ٹینکرز نہیں بھرے گئے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | بلومبرگ کا پاکستان کے آئی ایم ایف کے ساتھ کامیاب مذاکرات ہونے کا دعوی

یہ بھی پڑھیں | پاکستانی صحت حکام نے کوویڈ۱۹ کی چھٹی لہر سے خبردار کر دیا

سپلائی متاثر 

چیئرمین نے مزید کہا کہ فلنگ کا عمل معطل ہونے سے ملک بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کی سپلائی متاثر ہوئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ یہ حالات ملک بھر میں ایندھن کے بحران کا باعث بن سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ ہنگامی بنیادوں پر نکاسی آب کے انتظامات کریں۔ 

 پی پی ڈی اے نے اس سے قبل تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے پیش نظر ملک بھر میں پیٹرول اسٹیشنوں کو بند کرنے کی دھمکی دیتے ہوئے ملک گیر ہڑتال کا انتباہ دیا تھا۔ 

 ایک بیان میں پی پی ڈی اے کے چیئرمین عبدالسمیع خان نے کہا کہ پٹرولیم کی فروخت موجودہ نرخوں پر جاری رکھنا ممکن نہیں۔ انہوں نے اعلان کیا کہ 18 جولائی کے بعد جب تک پٹرولیم مصنوعات پر مارجن میں اضافہ نہیں کیا جاتا پٹرول پمپس بند رہیں گے۔ 

یہ بیان پی پی ڈی اے کی جانب سے ہنگامی اجلاس بلانے کے بعد جاری کیا گیا جہاں یہ فیصلہ کیا گیا کہ اسٹیشنوں کو کام جاری رکھنے کے لیے کم از کم کمیشن مارجن چھ فیصد درکار ہے۔ 

 عہدیداروں نے افسوس کا اظہار کیا کہ موجودہ 3.5 فیصد کا مارجن پائیدار نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں