پچھلے 6 ہفتوں میں ڈینگی سے کراچی میں 30 اموات

چھ ہفتوں کے دوران ڈینگی کے کیس

حکام نے تصدیق کی ہے کہ گزشتہ چھ ہفتوں کے دوران ڈینگی کے کیسوں میں غیرمعمولی اضافے کے بعد کراچی میں سات سرکردہ سرکاری اور نجی صحت مراکز میں ڈینگی وائرل انفیکشن کی وجہ سے اب تک کم از کم 30 افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں۔

 نجی نیوز کی جانب سے کی گئی تحقیقات میں انکشاف ہوا ہے کہ ڈینگی سے اموات آغا خان یونیورسٹی اسپتال (اے کے یو ایچ)، سول اسپتال کراچی (سی ایچ کے)، انڈس اسپتال کراچی، دارالصحت اسپتال، ساؤتھ سٹی اسپتال، نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ (این آئی سی ایچ) میں ہوئیں۔ 

 صحت مراکز نے نجی نیوز کو ڈیٹا فراہم کرنے سے انکار کر دیا جب کہ دیگر نے تصدیق کی کہ ڈینگی سے گزشتہ چند ہفتوں کے دوران اموات ہوئی ہیں لیکن انہوں نے ڈینگی کیسز اور اموات کی تصدیق شدہ تعداد فراہم کرنے کے لیے وقت مانگا ہے۔

محکمہ صحت سندھ نے کراچی میں ڈینگی وائرل انفیکشن

 ستم ظریفی یہ ہے کہ محکمہ صحت سندھ نے کراچی میں ڈینگی وائرل انفیکشن سے صرف ایک ہلاکت کی اطلاع دی ہے، جو کہ ڈسٹرکٹ ایسٹ میں پیش آیا، حالانکہ سندھ کے ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ سے وابستہ بیماری کی نگرانی کرنے والے حکام کا کہنا ہے کہ ڈینگی سے ہونے والی اموات کی تعداد بہت زیادہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں | پشاور: افغانستان سے میچ جیتنے کی خوشی میں فائرنگ سے دو افراد جاں بحق

یہ بھی پڑھیں | لاہور دنیا کا آلودہ ترین شہر قرار

 ایک اہلکار نے بتایا کہ آغا خان یونیورسٹی ہسپتال میں اس سال اب تک ڈینگی وائرل انفیکشن کی پیچیدگیوں کی وجہ سے کم از کم 11 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ زیادہ تر اموات گزشتہ چھ ہفتوں کے دوران ہوئیں جب ڈینگی بخار کے کیسز میں غیر معمولی اضافہ ہوا۔

ڈینگی شاک سنڈروم اور وائرل انفیکشن

 انہوں نے وضاحت کی کہ ان مریضوں کی موت ڈینگی شاک سنڈروم اور وائرل انفیکشن کی دیگر پیچیدگیوں کی وجہ سے ہوئی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ اے کے یو ایچ اس طرح کی اموات کے بارے میں محکمہ صحت سندھ اور صوبے کے دیگر متعلقہ اداروں کو باقاعدگی سے مطلع کرتا رہا ہے۔ 

 سی ایچ کے کی میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر روبینہ بشیر نے بتایا کہ انہوں نے اب تک ڈینگی کے 187 مریضوں کو داخل کیا ہے جن میں سے تین طبی مرکز میں علاج کے دوران دم توڑ گئے۔ ہم نے علامات کے ساتھ 9,020 مریضوں کا تجربہ کیا، جن میں سے 720 نے ڈینگی بخار کے لیے مثبت تجربہ کیا۔ ان میں سے تقریباً 187 کو ہسپتال میں داخل کرایا گیا، زیادہ تر پچھلے چھ ہفتوں میں، جن میں سے تین بیماری کی پیچیدگیوں کی وجہ سے مر چکے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔