پنجاب میں میرج ہالز پر پابندی عائد کر دی گئی

حکومت پنجاب نے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو محدود کرنے کے نیشنل کمانڈ اور آپریشن سنٹر (این سی او سی) کے فیصلے پر عمل درآمد کرتے ہوئے میرج ہالز (انڈور) اور دیگر تقاریب پر پابندی عائد کردی ہے۔ 

اس سے قبل شادی ہال مالکان نے انڈور شادیوں پر پابندی عائد کرنے کے این سی او سی کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ اپنے ہالس کو بند نہیں کرسکتے ہیں کیونکہ انہوں نے بکنگ کیلئے ایڈوانس ادائیگی لی ہوئی ہے۔

 پنجاب کے سکریٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کیپٹن (ریٹائرڈ) محمد عثمان کے جاری کردہ ایک نوٹیفکیشن کے مطابق یہ پابندی 31 جنوری تک جاری رہے گی جبکہ شادی اور دیگر تقریبات کو صرف کھلی جگہوں پر ہی کرنے کی اجازت ہوگی۔ 

نوٹیفکیشن میں مزید کہا گیا ہے کہ عوامی تقریبات میں 300 سے زیادہ افراد کو جمع ہونے کی اجازت نہیں ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں | وفاقی وزارت تعلیم کی 24 نومبر سے اسکول بند کرنے کی تجویز پیش

کھلی جگہ کی تقریبات میں ایس او پیز پر عمل کیا جائے گا۔ صوبائی سکریٹری صحت نے عوام سے حکومت پنجاب کی حمایت کرنے کی اپیل کی۔ انہوں نے مزید کہا کہ کوویڈ19 کی دوسری لہر صرف لوگوں کے تعاون اور حکومت کے تعاون سے ہی رک سکتی ہے۔

یاد رہے کہ 15 نومبر کو میرج ہال مالکان ایسوسی ایشن کے صدر رانا رئیس اور دیگر نے دعوی کیا کہ وفاقی وزیر اسد عمر وزیر اعظم عمران خان کی ان پالیسیوں کے خلاف کام کر رہے ہیں جنھوں نے کاروبار بند ہونے کی مخالفت کی تھی۔ 

انہوں نے کہا کہ جلوسوں اور شاپنگ مالز پر پابندی نہیں ہے اور یہ دعوی ہے کہ اس معاملے پر ہم نے پہلے بھی اس معاملے پر حکام سے رجوع کیا تھا لیکن کسی نے بھی ہمارا مناسب جواب نہیں دیا۔ اسی لئے ہم نے ہالوں کو چلانے کا فیصلہ کیا ہے۔ قانون صرف شادی ہالوں پر مسلط کیا جارہا تھا۔

شادی ہال مالکان نے بتایا ہے کہ انہوں نے مارچ میں کوویڈ19 کے بعد حکومت کی طرف سے لاک ڈاؤن کے دوران جو نقصانات اٹھائے تھے ان کو پورا کرنا شروع کیا ہے۔ اگر ہم کام کرنا چھوڑ دیں تو ہم اپنے ملازمین کو کس طرح تنخواہ کی ادائیگی کرسکیں گے؟ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *