پاکستان کی افغانستان کو پانچ بلین روپے کی امداد روانہ

پاکستان نے کل 1800 میٹرک ٹن گندم کی پہلی کھیپ افغانستان کو انسانی امداد کے طور پر بھیجی ہے۔ 

وزارت خارجہ نے اعلان کیا کہ 1800 میٹرک ٹن گندم کی پہلی کھیپ دن کے اوائل میں طورخم بارڈر سے گزری۔ یہ کھیپ 5 ارب روپے کے انسانی پیکج کا حصہ ہے جس کا اعلان وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے افغانستان کے لیے دی جانے والی امداد کے لیے کیا گیا ہے۔ پیکیج میں 50,000 میٹرک ٹن گندم، موسم سرما میں پناہ گاہیں اور ہنگامی طبی سامان شامل ہے۔ 

وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ پہلی کھیپ وزیراعظم کے معاون خصوصی شہزاد ارباب نے افغان فریق کے حوالے کی۔

 پاکستان کا خیال ہے کہ افغانستان کی موجودہ انسانی اور معاشی صورتحال عالمی برادری کی فوری توجہ کی متقاضی ہے۔ یہ بہت اہم ہے کہ عالمی برادری انسانی بحران سے نمٹنے اور معاشی صورتحال کو مستحکم کرنے میں مدد کے لیے فوری بنیادوں پر افغان عوام تک پہنچنے کے لیے اپنی کوششوں کو تیز کرے۔ 

یہ بھی پڑھیں | منی بجٹ: اپوزیشن کا شہباز شریف پر سوال

 وزارت خارجہ نے مزید کہا کہ پاکستان ایک پرامن، مستحکم اور خوشحال افغانستان کے لیے ہمارے عزم کے حصے کے طور پر برادر افغان عوام کی حمایت میں اپنی کوششیں جاری رکھے گا۔

گزشتہ ماہ عمران خان نے افغانستان کے لیے خوراک اور دیگر انسانی امداد کا اعلان کیا تھا جبکہ بھارت سے خوراک کی امداد پاکستان کے راستے افغانستان تک پہنچانے کی اجازت بھی دی تھی۔ 

 ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم نے 5 ارب پاکستانی روپے (تقریباً 28.4 ملین ڈالر) کی انسانی امداد کی فوری ترسیل کا حکم دیا، جس میں 50,000 میٹرک ٹن گندم، ہنگامی طبی سامان، موسم سرما کی پناہ گاہیں اور دیگر سامان سمیت غذائی اجناس شامل ہوں گے۔ 

  پاکستان بعض افغان برآمدات پر ٹیرف اور سیلز ٹیکس بھی کم کرے گا۔ وزیر اعظم کے دفتر نے کہا کہ وہ ہندوستان کی طرف سے افغانستان کو انسانی امداد کے طور پر پیش کردہ 50,000 میٹرک ٹن گندم کو جیسے ہی ہندوستانی فریق کے ساتھ طریقوں کو حتمی شکل دے گا پاکستان سے گزرنے کی اجازت دے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں