پاکستان نے ۱۱ بلین ڈالر کے نقصان سے بچنے کے لئے ڈیل کر لی

حکومت نے اتوار کو ریکوڈک کیس میں ملک کو 11 بلین ڈالر کے جرمانے سے بچانے کا دعویٰ کیا ہے اور بلوچستان میں اس جگہ سے سونے اور تانبے کے بڑے ذخائر کی کھدائی کے لیے ایک منصوبے کی تشکیل نو کی ہے۔

وفاقی اور بلوچستان کی حکومتوں اور دو بین الاقوامی فرموں – اینٹوفاگاستا پی ایل سی اور بارک گولڈ کارپوریشن – نے اصولی طور پر ریکوڈک پراجیکٹ کی تشکیل نو کے لیے ایک فریم ورک، اور انٹوفاگاستا کے لیے اس منصوبے سے باہر نکلنے کے لیے ایک راستہ طے کیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے دستخط کی تقریب میں شرکت کی۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے امید ظاہر کی کہ یہ سرمایہ کاری بلوچستان میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کا آغاز کرے گی جس سے صوبے میں عام شہریوں کا معیار زندگی بدل جائے گا۔

 بعد ازاں، ٹویٹس کی ایک سیریز میں، وزیر اعظم خان نے ریکوڈک کان کی ترقی کے معاہدے پر قوم، خاص طور پر بلوچستان کے عوام کو مبارکباد دی۔ 

انہوں نے کہا کہ میں 10 سال کی قانونی لڑائیوں اور گفت و شنید کے بعد ریکوڈک کان کی ترقی کے لیے بیرک گولڈ کے ساتھ کامیاب معاہدے پر بلوچستان کی قوم اور عوام کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ تقریباً 11 بلین ڈالر کا جرمانہ مقرر ہے، 10 بلین ڈالر بلوچستان میں لگائے جائیں گے جس سے 8000 نئی ملازمتیں پیدا ہوں گی۔

یہ بھی پڑھیں | او آئی سی اجلاس پاکستان کے لئے اتنا اہم کیوں ہے 

 ریکو ڈک ممکنہ طور پر دنیا میں سونے اور تانبے کی سب سے بڑی کان ہوگی۔ یہ ہمیں  قرضوں سے آزاد کرے گا اور ترقی اور خوشحالی کے ایک نئے دور کا آغاز ہو گا۔ 

 دریں اثنا، بلوچستان کابینہ نے خصوصی اجلاس میں معاہدے کی منظوری دیتے ہوئے اسے صوبے کے لیے گیم چینجر قرار دیا ہے۔

 بعد ازاں وزیر توانائی حماد اظہر اور وزیر اعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ معاہدے پر دستخط کے بعد پاکستان نہ صرف 11 ارب ڈالر کے جرمانے سے بچ جائے گا بلکہ اسے تلاش کرنے کا موقع بھی ملے گا۔ 

 انہوں نے کہا کہ ریکوڈک منصوبے کے تحت 10 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کی جائے گی جس سے مقامی لوگوں کے لیے 8000 نئی ملازمتیں پیدا ہوں گی۔ وزیر نے کہا کہ نئے معاہدے کے مطابق بیرک گولڈ کارپوریشن کو 50 فیصد اور بلوچستان حکومت کو 25 فیصد حصہ ملے گا، جب کہ باقی 25 فیصد سرکاری اداروں – آئل اینڈ گیس ڈویلپمنٹ کمپنی (او جی ڈی سی ایل)، پاکستان پیٹرولیم کو ملے گا۔ لمیٹڈ (پی پی ایل) اور گورنمنٹ ہولڈنگز پاکستان (جی ایچ پی ایل) کو ملے گا۔

انہوں نے بتایا کہ وفاقی اور بلوچستان حکومتوں نے 2006 میں کینیڈین کمپنی بیرک گولڈ اور چلی کی فرم اینٹوفاگاسٹا کے ساتھ ریکوڈک کان سے سونا اور تانبا نکالنے کے لیے ایک معاہدے پر دستخط کیے تھے۔ معاہدے کے مطابق 37.5 فیصد حصہ دو غیر ملکی کمپنیوں کو اور 25 فیصد بلوچستان حکومت کو دیا گیا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں