پاکستان اسٹاک ایکسچینج کا منفی رجحان برقرار، دوسو پوائنٹس کی کمی

امریکی ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی قدر میں کمی کے بعد ریچھوں نے واپسی کی

 پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں منگل کو 200 سے زائد پوائنٹس کی کمی کے ساتھ گراوٹ کا رجحان جاری رہا ہے۔ اسٹاک مارکیٹ سبز رنگ میں کھلی، تاہم، بعد میں یہ فروخت کے دباؤ کا شکار ہوگئی کیونکہ امریکی ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی قدر میں کمی کے بعد ریچھوں نے واپسی کی ہے۔

بند ہونے پر، بینچ مارک کے ایس ای-100 انڈیکس 245.62 پوائنٹس یا 0.59 فیصد کی کمی کے ساتھ 41,102.57 پوائنٹس پر بند ہوا ہے۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ

عارف حبیب کے مطابق، بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے پروگرام کی بحالی سے متعلق خدشات کے باعث سرمایہ کاروں کی شرکت کم رہی ہے۔

مرکزی بورڈ پر حجم خشک رہے جبکہ تیسرے درجے کے اسٹاکس میں اچھی مقدار دیکھی گئی۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی اسٹاک مارکیٹ ایشیاء کی تیسری بدترین کارکردگی والی بن گئی  

یہ بھی پڑھیں | لاکھ سے تین لاکھ کمانے والوں پر 12 فیصد ٹیکس عائدایک   

کارکردگی میں حصہ ڈالنے والے شعبوں

 کارکردگی میں حصہ ڈالنے والے شعبوں میں بینک (-80.5 پوائنٹس)، سیمنٹ (-50.4 پوائنٹس)، کھاد (-35.9 پوائنٹس)، تلاش اور پیداوار (-17.5 پوائنٹس) اور تمباکو (-15.6 پوائنٹس) شامل ہیں۔ 

سیشن کے دوران 321 کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا۔ کاروبار کے اختتام پر 119 کے حصص کے بھاؤ سبز، 176 کے حصص کے بھاؤ سرخ اور 26 کے بھاؤ میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی ہے۔

تجارتی حجم 76.89 ملین شیئرز تک گر گیا

پیر کے 86.61 ملین کے مقابلے میں مجموعی طور پر تجارتی حجم 76.89 ملین شیئرز تک گر گیا۔ دن کے دوران حصص کی مالیت 2.39 ارب روپے رہی ہے۔

 میپل لیف سیمنٹ فیکٹری لمیٹڈ 6.53 ملین حصص کی تجارت کے ساتھ والیوم لیڈر تھی، جو 1.39 روپے کی کمی کے ساتھ 25.44 روپے پر بند ہوئی۔ اس کے بعد ورلڈ کال ٹیلی کام لمیٹڈ کے 4.79 ملین حصص کے سودے ہوئے، جو 0.02 روپے کے اضافے سے 1.37 روپے پر بند ہوئے اور فوجی سیمنٹ کمپنی لمیٹڈ کے 4.43 ملین حصص کے سودے ہوئے، 0.50 روپے کے خسارے سے 13.47 روپے پر بند ہوئے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں