پاکستانی سیاستدان ٹویٹر پر انڈین پراپیگنڈا پوسٹس ڈلیٹ نا کرنے پر برہم

ایک روز قبل ، کراچی مین خانہ جنگی کی جعلی خبروں کی نشاندہی کرنے والے بھارتی میڈیا کی خبروں کو ٹویٹر کی جانب سے ڈلیٹ نا کئے جانے پر متعدد پاکستانی سیاستدانوں ، جن میں وزراء بھی شامل ہیں ، نے مائیکرو بلاگنگ پلیٹ فارم ٹویٹر پر شدید تنقید کی ہے۔

 انڈیا کی جانب سے یہ پراپیگنڈا تب شروع ہوا جب کراچی میں کیپٹن صفدر کی گرفتاری ہوئی۔ انسانی حقوق کی وزیر شیریں مزاری نے کہا کہ یہ بدقسمتی ہے کہ  ٹویٹر سپورٹ [جان بوجھ کر] انڈین پراپیگنڈا کو نظرانداز کررہی ہے۔ جبکہ انڈیا کی جانب سے بےشمار جعلی خبریّ گردش کر رہی ہیں۔

شیریں مزاری نے مزید کہا کہ فیس بک بھی بھارتی پروپیگنڈا اور نفرت انگیز پوسٹس کو پروموٹ کررہا ہے!  

مزید پڑھئے | شاہد آفریدی نے آئی پی ایل میں کھلاڑیوں کی عدم شرکت کو نقصان دہ قرار دیا

تاہم ، سمندری امور کے وزیر علی حیدر زیدی نے حزب اختلاف کی پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کو مورد الزام قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہندوستانی میڈیا کا پروپیگنڈہ اپنے عروج پر ہے اور افسوس کی بات ہے کہ پی ڈی ایم سرکس کے ذریعہ اسے ایندھن دیا گیا ہے۔

اسٹیٹس اینڈ فرنٹیئر ریجنز (سیفرن) وزیر شہریار آفریدی نے بھارتی میڈیا کی  پاکستان کے ریاستی اداروں کو بدنام کرنے کے لئے جعلی ، من گھڑت اور بدنیتی پر مبنی پروپیگنڈہ مہم پر روشنی ڈالی۔

انہوں  نے وضاحت کی کہ اس کا مطلب ہے کہ جمہوریت کبھی بھی ایک فرد کا نظریہ نہیں ہوتا؛ جب آزادیوں کو کم کیا جاتا ہے تو لوگ پیچھے ہٹ جاتے ہیں۔ جب آئینی حقوق کو خطرہ ہوتا ہے تو بہادر بول دیتے ہیں۔

یاد رہے کہ  ایک دن پہلے ، بھارتی میڈیا نے پاکستان کے سب سے بڑے بندرگاہ والے شہر میں جاری کارروائیوں سے گلط تاثر شئیر کیا اور حریف افواج ، بم دھماکوں ، اور کراچی میں ایک خیالی علاقہ کے مابین بندوق کی لڑائیوں کے ساتھ ایک مکمل خانہ جنگی کا منظر پیش کیا۔ 

غلط خبریں شائع کرنے والے میگزینز میں انڈیا ٹوڈے ، زی نیوز انگلش ، سی این این نیوز 18 ، اور انڈیا ڈاٹ کام شامل تھے۔ یہ تصدیق شدہ ٹویٹر اکاؤنٹ ہیں جنہوں نے یہ دعوی کیا کراچی میں مسلح جھڑپیں شروع ہو گئی ہیں۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *