مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

وفاقی حکومت نے شہباز شریف کے خلاف دائر درخواست واپس لے لی

وفاقی حکومت نے بدھ کے روز مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کو بیرون ملک پرواز کے لئے لاہور ہائیکورٹ (ایل ایچ سی) کی جانب سے دی جانے والی اجازت کو چیلنج کرنے والی اپنی درخواست واپس لے لی۔ 

شہباز شریف کو 7 مئی کو ہائی کورٹ کے سنگل جج بینچ نے ملک چھوڑنے کی اجازت دی تھی جبکہ اسی دن انہوں نے اپنا نام بلیک لسٹ سے خارج کرنے کے لئے درخواست دائر کی تھی۔ 

تفصیلات کے مطابق 17 مئی کو حکومت نے شہباز شریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈال دیا  جبکہ انہوں نے لاہور ہائیکورٹ کے 7 مئی کے حکم کے خلاف بھی عدالت عظمیٰ کو درخواست دی۔

 اس سے قبل ، جسٹس اعجاز الاحسن اور جسٹس سجاد علی شاہ پر مشتمل عدالت عظمیٰ کے دو ججوں کے بنچ نے کہا کہ ابتدائی طور پر حکومت ، ہائی کورٹ کے فیصلے کی توہین میں ہے۔

 آج کی کارروائی کے دوران ، کھلی عدالت میں تصفیہ میں ، ن لیگ کے صدر نے یقین دہانی کرائی کہ وہ توہین عدالت کا مقدمہ نہیں چلائیں گے۔ 

لاہور ہائی کورٹ کے رجسٹرار نے ایس سی کے سامنے یہ ریکارڈ پیش کیا۔ جسٹس احسن نے استفسار کیا کہ شہباز شریف کا کیس سسٹم کے تحت سماعت کے لئے طے ہوا تھا یا کسی اور خاص وجہ سے؟

 لاہور ہائیکورٹ کے رجسٹرار نے جواب دیا کہ درخواست اعتراض کے لئے طے کی گئی ہے اور فیصلہ کیا گیا ہے کہ اس اعتراض کا فیصلہ اس درخواست کے ساتھ ہی کیا جائے گا۔ 

رجسٹرار نے عدالت کو آگاہ کیا کہ یہ اعتراض جمعہ کو صبح ساڑھے نو بجے اٹھایا گیا تھا اور اس کیس کی سماعت صبح ساڑھے گیارہ بجے ہوئی تھی۔

اس پر جج نے ریمارکس دیئے کہ سرکاری وکیل کو ہدایات لینے کے لئے صرف 30 منٹ کا وقت دیا گیا (اس دن)۔ عدالت نے مزید پوچھا کہ رواں سال کے دوران جمعہ کی دوپہر بارہ بجے کتنے کیسوں کی سماعت ہوئی اور انہوں نے مزید کہا کہ لاہور ہائیکورٹ نے اس فہرست کے بارے میں بھی نہیں پوچھا جس میں شہباز شریف کا نام ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم عمران خان کو بڑے دعوے کرنے کی عادت ہے، بلاول بھٹو

عدالت نے مزید پوچھا کہ کیا اس معاملے میں عام حکم لاہور ہائیکورٹ نے جاری کیا ہے؟ اٹارنی جنرل نے عدالت سے وفاقی اپیل خارج کرنے کا مطالبہ کیا اور یہ کہ لاہور ہایئکورٹ کا نام بلیک لسٹ سے خارج کرنے کا فیصلہ مثال نہیں تھا۔ 

عدالت عظمیٰ نے مزید کہا کہ ن لیگ کے رہنما شہباز شریف کو جس طرح سے ریلیف دیا گیا وہ کسی کے لئے مثال نہیں بنایا جاسکتا۔ 

اٹارنی جنرل نے مزید دعا کی کہ شہباز شریف کو آزمانے والے جج کو ہائی کورٹ نے ٹرانسفر کیا اور مزید کہا کہ نیا جج مقرر کرنے میں تین سے چار ماہ لگتے ہیں اور شاید مسلم لیگ (ن) کے صدر نہیں چاہتے ہیں کہ ان کا مقدمہ جلد نمٹا جائے۔

  لاہور ہائیکورٹ کے رجسٹرار نے بتایا کہ نئے ججوں کی تقرری کے لئے نام بھیجے گئے ہیں۔ جسٹس شاہ نے سوال کیا کہ کیا حکومت نے نئے ناموں پر اعتراض کیا؟ اٹارنی جنرل نے جواب دیا کہ انہیں نئے ناموں پر کسی قسم کے اعتراض کا علم نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔