وزیر اعظم عمران کے امدادی اقدامات پر چار ماہ میں 237 ارب روپے لاگت آئے گی

ترقیاتی بجٹ میں کٹوتی اور دیگر اخراجات میں بچت کے ساتھ، وزیر اعظم کی جانب سے پیر کو کئے گئے اعلان کے مطابق چار مہینوں کے دوران حکومت اپنے امدادی اقدامات میں 237 ارب روپے کے لگ بھگ خرچ کرے گی۔

 وزیراعظم کی جانب سے اعلان کردہ ریلیف اقدامات کے اہم اجزاء میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر کمی، بجلی کے نرخوں میں 5 روپے فی یونٹ کمی، انٹرن شپ اور اسکالرشپ کے علاوہ صنعتوں کے لیے ٹیکس میں رعایتیں شامل ہیں۔

 وزیراعظم کی پالیسی اقدامات کو حتمی شکل دینے میں شامل حکام نے بتایا کہ امدادی پیکج کی مالیاتی لاگت چار طریقوں سے پوری کی جائے گی۔ ان میں ترقیاتی اخراجات میں کمی، حکومت کے زیر ملکیت کارپوریٹ اداروں کے منافع کا رخ موڑنا، بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے 1.4 بلین ڈالر کی ہنگامی امداد میں سے غیر خرچ شدہ فنڈز، اور حکومت کی جانب سے اعلان کردہ 550 ارب روپے کے منی بجٹ میں فراہم کردہ سہولیات شامل ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | لگتا ہے وزیراعظم عمران خان کو پی ای سی اے آرڈیننس پر بریفنگ نہیں دی گئی، لاہور ہائی کورٹ 

 دوسری طرف، ان اقدامات سے مالیاتی خسارے کی حد 6.9 فیصد پر اثر نہیں پڑے گا جس کا تخمینہ آئی ایم ایف پروگرام کے تحت ایک حالیہ بحالی مشق کے بعد جی ڈی پی کے سائز میں اضافے کے تناظر میں لگایا گیا ہے۔ 

 وزیر خزانہ کے ترجمان مزمل اسلم نے کہا کہ انہیں یقین نہیں ہے کہ آئی ایم ایف امدادی اقدامات کا کیا جواب دے گا لیکن اسے کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہیے کیونکہ ہم مالیاتی خسارے میں اضافہ نہیں کریں گے اور اخراجات میں ایڈجسٹمنٹ کریں گے۔

  انہوں نے کہا کہ پیکج کے کل اثرات کا تخمینہ تقریباً 250 ارب روپے لگایا گیا ہے جو کہ بجٹ میں ہی ختم ہو جائے گا۔ 

 ایک اور اہلکار نے بتایا کہ وزیر خزانہ نے پہلے ہی اپنی دسمبر کی منی بجٹ تقریر میں بجٹ میں 33 ارب روپے کی مراعات کا اعلان کر دیا تھا۔ جی ایس ٹی کی چھوٹ کو واپس لینے کی وجہ سے کچھ تخمینے سے زیادہ ریونیو کی وصولی ہوئی۔

 انہوں نے کہا کہ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر کمی کے اثرات کا مطلب تقریباً 1.5 بلین لیٹر کی اوسط فروخت کی بنیاد پر تقریباً 15 ارب روپے کا ماہانہ اثر پڑے گا۔

 بین الاقوامی قیمتوں میں اضافے کی صورت میں، اثرات بڑھیں گے اور اس کے نتیجے میں مجموعی مالیاتی اثر 250 ارب روپے تک پہنچ سکتا ہے۔ 

تیل کی عالمی قیمتوں میں فی بیرل 1 ڈالر کا اضافہ مقامی قیمت میں تقریباً 1.20 روپے فی لیٹر ہے۔ انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ اگر ایران کے جوہری مذاکرات اور روس یوکرین مذاکرات میں پیش رفت ہوتی ہے تو مستقبل میں قیمتیں کم ہو جائیں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔