وزیر اعظم عمران خان نے سندھ میں 446 بلین روپے خرچ کرنے کا منصوبہ بتا دیا

وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کے روز بجلی کی فراہمی ، آبپاشی ، کھیلوں اور مواصلاتی منصوبوں کے ذریعے پی پی پی زیرقیادت سندھ کے پسماندہ علاقوں کی ترقی کے لئے 446 ارب روپے کا تاریخی ترقیاتی پیکیج جاری کیا ہے۔

 اس پیکیج میں 200،000 ایکڑ زرعی اراضی کی بحالی ، 14 پاسپورٹ دفاتر کی اپ گریڈیشن ، تقریبا 28،800 ایکڑ سیراب کرنے کیلئے نائی گاج ڈیم کی تعمیر ، 306 کلو میٹر سکھر حیدرآباد موٹر وے ، 160 دیہات کو گیس کی فراہمی اور نظرانداز دیہاتوں میں 30،000 نئے بجلی کے کنیکشن شامل ہیں۔ 

 وزیر اعظم نے یہاں مستحق نوجوانوں میں کاروباری قرضوں کے چیک حوالے کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مجوزہ منصوبے ایک ماہ کے اندر شکل اختیار کرنے لگیں گے کیونکہ ان کی فزیبلٹی اسٹڈیز مکمل ہوچکی ہے۔ 

وزیر اعظم نے کہا کہ وہ ترقیاتی پیکیج کی خوشخبری کے ساتھ اندرونِ سندھ کا دورہ کرنے پر خوش ہیں ، جو 18 ویں ترمیم کے تحت صوبائی حکومت کی ذمہ داری ہے۔

یہ بھی پڑھیں | کابینہ میں ردو بدل، شوکت ترین کو نیا عہدہ مل گیا

 انہوں نے کہا کہ جنوبی بلوچستان اور خیبر پختونخوا کے قبائلی اضلاع کے علاوہ سندھ کا اندرون ملک ملک کا غریب ترین علاقہ ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ اندرون سندھ کے عوام بنیادی سہولیات اور حقوق کے بغیر مشکل حالات میں زندگی بسر کر رہے ہیں ، اس کے علاوہ پولیس کے ذریعہ انھیں زیادتی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ 

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ انشاء اللہ ہم پاکستان کے پسماندہ علاقوں کی ترقی میں ایمانداری اور امانتداری سے مدد کریں گے۔ مجھے فخر ہے کہ ہم نے پاکستان کی تاریخ میں جنوبی بلوچستان کے لئے پہلا ترقیاتی پیکیج دیا ہے۔ ہم نے اب ضم شدہ قبائلی علاقے کو سب سے بڑا پیکیج بھی دیا جس میں اضافہ کیا جائے گا۔

 میں نے سندھ میں ایک بار پھر اپنے لوگوں سے یہ عہد کیا ہے کہ میں ان کی رہائشی حالت کو بہتر بنانے کی پوری کوشش کروں گا۔ وزیر اعظم نے اجتماع کو بتایا کہ ان کی حکومت کو سب سے زیادہ قرضوں کا بوجھ وراثت میں ملا ہے۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے ڈھائی سالوں کے دوران ، حکومت نے 35،000 ارب کا قرض ادا کیا ، جو پچھلی حکومت کی جانب سے ادا کی گئی رقم سے 15،000 بلین روپے زیادہ ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ پسماندہ علاقوں کی تقدیر بدلنے کے لئے سڑکوں کی تعمیر ، آبپاشی اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی پر عوامی فلاح و بہبود کے لئے 15،000 ارب روپے خرچ کیے جاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سندھ کو اپنا مختص حصہ دینے کے باوجود ، وفاقی حکومت نے صوبے کے لئے ترقیاتی پیکیج کے لئے 446 ارب روپے مختص کیے ہیں ، جس میں نوجوانوں کو مہارت کی تربیت ، کاروباری قرضوں ، کھیلوں کی سہولیات اور مواصلاتی نیٹ ورک پر توجہ دی جائے گی۔

 انہوں نے کہا کہ ملک کی 60 فیصد آبادی کو 30 سال سے کم عمر کی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانا ضروری ہے تاکہ انہیں ایک ایسا اثاثہ بنایا جاسکے جو بصورت دیگر ایک ذمہ داری بن جاتی ہے۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x