نیوٹرلز سے کہتا ہے اپنی پالیسی پر نظر ثانی کریں اس سے پہلے کہ دیر ہو جائے، عمران خان

پی ٹی آئی کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان نے جمعرات کو نیوٹرلز کو مخاطب کر کے کہا کہ وہ اپنی پالیسیوں پر نظرثانی کریں اس سے پہلے کہ دیر ہو جائے۔

اسلام آباد میں ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے

یہ بات انہوں نے اسلام آباد میں ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی کہ میں آج غیر جانبداروں سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ کیا آپ جانتے ہیں کہ ملک کس طرف جا رہا ہے؟

 عمران خان نے سوال کیا کہ جب آپ کو یہ بھی نہیں معلوم کہ اگلے 2 سے 3 ماہ میں کیا ہونے والا ہے تو ملک اور معیشت کیسے ترقی کر سکتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ معاشی ترقی کے لیے سیاسی استحکام شرط ہے اور نہ ہی منصفانہ انتخابات کے بغیر ممکن ہے۔ 

 پی ٹی آئی کے چیئرمین نے متنبہ کیا کہ “درست فیصلے” فوری طور پر کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ وہ موجودہ حکومت کو قبول کرنے کے بجائے موت کو ترجیح دیں گے۔

یہ بھی پڑھیں | شہباز گل پمز ہسپتال داخل، میڈیکل ٹیسٹ جاری

یہ بھی پڑھیں | آصف علی زرداری بھی پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے سے ناخوش

 انہوں نے یاد دلایا کہ ان کے اقتدار میں آنے سے قبل انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) انہیں پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی کرپشن کے بارے میں بتایا کرتی تھی۔ مجھے یقین تھا کہ اسٹیبلشمنٹ ایسا نہیں ہونے دے گی لیکن ایسا نہیں ہوا۔ 

 عمران خان نے اسٹیبلشمنٹ کو یاد دلایا کہ ’زیادہ طاقت ہو تو بڑی ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔ عمران خان نے کہا کہ جب وہ وزیراعظم بنے تو قومی احتساب بیورو (نیب) ان کے کنٹرول میں نہیں تھا۔ کسی کا ہاتھ تھا جو ایکسلریٹر کو دباتا تھا اور اپنی مرضی کے مطابق اسے ختم کر دیتا تھا۔ اگر نیب میرے کنٹرول میں ہوتا تو میں ان (سیاسی جماعتوں) سے 15 سے 20 ارب روپے واپس لے لیتا۔ 

اب میں اسٹیبلشمنٹ سے پوچھتا ہوں کہ آپ نے ان کرپٹ لیڈروں کو ملک پر کیسے حکومت کرنے دی؟ اس کا مطلب ہے کہ آپ چوری کو بری چیز کے طور پر نہیں دیکھتے ہیں۔ 

جب اسٹیبلشمنٹ کو کرپٹ لوگوں کا علم تھا تو ان کا راستہ کیوں نہیں روکا؟ سابق وزیر اعظم نے اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے پوچھا کہ اسٹیبلشمنٹ کے پاس ملک میں سب سے زیادہ طاقت ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔