نواز شریف کو ڈپلومیٹک پاسپورٹ جاری کرنے سے روکنے کے لئے درخواست دائر

اسلام آباد ہائی کورٹ کو ایک درخواست میں مسلم لیگ (ن) کے رہنما اور سابق وزیراعظم نواز شریف کو متوقع سفارتی پاسپورٹ جاری کرنے سے روکنے اور لندن سے پاکستان واپسی پر انہیں فوری طور پر گرفتار کرنے کی استدعا کی گئی ہے۔

 کرپشن کیس میں سزا پانے والے نواز شریف نومبر 2019 سے خرابی صحت کا بہانہ بنا کر لندن میں مقیم ہیں جبکہ لاہور ہائی کورٹ نے انہیں اپنے چھوٹے بھائی شہباز شریف کے بعد علاج کے لیے چار ہفتوں کے لیے ملک سے باہر جانے کی اجازت دی تھی۔ اور موجودہ وزیراعظم نے وعدہ کیا کہ نواز شریف مقررہ وقت کے اندر واپس آجائیں گے۔ بعد ازاں نواز شریف نے طبی بنیادوں پر لندن میں قیام میں توسیع کی درخواست کی۔ 

ایک وکیل ایڈووکیٹ نعیم حیدر پنجوتھا نے جمعرات کو آئی ایچ سی میں درخواست دائر کی جس میں میڈیا رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ نواز شریف کو نو منتخب وزیر اعظم شہباز کی ہدایت پر سفارتی پاسپورٹ جاری کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ سفارتی پاسپورٹ کے اجراء کی ہدایات داخلہ اور خارجہ امور کے سیکرٹریوں کو دی گئی تھیں۔

یہ بھی پڑھیں | پیٹرول کی قیمت میں ہوشربا اضافے کی تجویز دے دی گئی 

درخواست گزار نے استدعا کی کہ نواز شریف ایک عدالتی مفرور ہیں جنہیں نیب (قومی احتساب بیورو) کی عدالت نے بدعنوانی کے جرم میں سزا سنائی ہے لہذایہ قانون کی خلاف ورزی، نظام انصاف کا مذاق ہے اور اگر سفارتی پاسپورٹ جاری ہو تو قوم کی توہین ہے کہ یہ ایک مجرم کو جاری کیا جائے گا۔

 انہوں نے کہا کہ مجرم کو سفارتی پاسپورٹ جاری کرنا کسی مجرم کو عزت، ریاستی پروٹوکول اور وقار دینے کے مترادف ہے اور اگر مجرم عدالت سے مفرور ہے تو یہ ملک کے پورے عدالتی نظام کی بدنامی کا باعث بنتا ہے۔

 مزید برآں، درخواست میں کہا گیا کہ ملک کی عدالتوں نے قرار دیا تھا کہ ایک مفرور ان تمام حقوق سے محروم ہو جائے گا جن کا ایک عام آدمی حقدار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئین کا آرٹیکل 25 شہریوں کے ساتھ امتیازی سلوک کے خلاف واضح معیارات طے کرتا ہے اور تمام عام شہریوں کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جائے گا اگر کسی مجرم کو سفارتی پاسپورٹ جاری کیا جاتا ہے جس میں عام پاسپورٹ سے کہیں زیادہ مراعات اور استثنیٰ حاصل ہوتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔