ملک بھر میں عید میلاد النبی انتہائی اور عقیدت سے منائی جا رہی ہے

پاکستان میں مسلمان آج جمعہ کو  پورے ملک میں مذہبی جوش و جذبے کے ساتھ عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منارہے ہیں۔ آج کے مبارک دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت میں 31 بندوقوں کی سلامی اور تمام صوبائی دارالحکومتوں میں 21 بندوقوں کی سلامی کے ساتھ شروع ہوا جبکہ فجر کی نماز کے بعد مساجد میں امت مسلمہ کے اتحاد اور ملک کی ترقی و خوشحالی کے لئے خصوصی دعا بھی کی گئی۔ 

مزید پڑھئے | پارلیمنٹ حملہ کیس میں بڑی پیشرفت ، وزیر اعظم بری

بالخصوص آج  تقاریب اور محافل میلاد کا اہتمام کیا جارہا ہے جس کا مقصد عید میلاد النبی کے سلسلے میں ، لوگوں کو سیرت مصطفی سے متعارف کرنا ہے۔

وزارت مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی کے زیر اہتمام ایک بین الاقوامی رحمت اللعالمین کانفرنس اسلام آباد میں بھی شیڈول ہے۔ کانفرنس کا افتتاحی بیان صدرڈاکٹر عارف علوی کی زیرصدارت ہوگا جبکہ اختتامی اجلاس کی صدارت وزیر اعظم عمران خان کریں گے۔ حکومت نے کل (ہفتہ) سے عشق رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) ہفتہ منانے کا بھی اعلان کیا ہے۔

یقینی بنائیں اور توہین رسالت اور بے حرمتی سے باز رہیں۔ صدر عارف علوی نے مسلم عالمی رہنماؤں پر زور دیا کہ وہ خاتم النبیین (صلی اللہ علیہ وسلم) کی حرمت کو یقینی بنانے کے لئے بین الاقوامی تنظیموں کے سامنے متفقہ مطالبہ کریں۔ 

صدر نے قوم کے نام اپنے پیغام میں کہا کہ مغرب میں توہین مذہب کے قابل مذمت واقعات نے پوری دنیا کے مسلمانوں کے غم و غصے کی دعوت دی ہے۔ ڈاکٹر علوی نے کہا کہ اس طرح کے واقعات نے تفرقہ پیدا کیا اور بین المذاہب ہم آہنگی اور بات چیت کی روح کو بھی پامال کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسلامو فوبیا سے بہتر طریقے سے نپٹنے اور اسلام کے حقیقی جذبے کو اجاگر کرنے کے لئے رسول اکرم (صلی اللہ علیہ وسلم) کی تعلیمات اور قرآن پاک کے حقیقی پیغام کو عام کرنا ضروری ہے۔

 وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حضرت محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے انصاف ، برادری اور مساوات کے ساتھ ریاست مدینہ قائم کیا جو آج بھی پوری دنیا کے لئے ایک نمونہ ہے۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ دنیا بھر میں امن ، سکون اور بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لئے پیغمبر اسلام (صلی اللہ علیہ وآلہ وصحبہ وسلم) کی تعلیمات صبر اور رواداری کو پھیلانا چاہئے۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *