مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    مفتی تقی عثمانی سے ملنے آنے والے شخص سے خنجر برآمد

    ممتاز عالم دین اور نائب صدر دارالعلوم کورنگی ، کراچی  مفتی تقی عثمانی سے ملاقات کرنے کی غرض سے آئے شخص سے خنجر برآمد ہوا ہے۔

     پولیس تفتیش کاروں کو اس بات کے کوئی ٹھوس شواہد نہیں ملے جس سے یہ معلوم ہو سکے کہ یہ ایک منصوبہ کے تحت باقاعدہ حملہ تھا لیکن ایسا لگتا ہے کہ ملزم نفسیاتی مسئلوں کا شکار تھا۔

     حقائق اور ملزم کا مقصد جاننے کے لئے پولیس نے ملزم کو تحویل میں لے کر مزید تفتیش شروع کردی ہے۔ 

    مفتی تقی عثمانی نے اس واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ملزم آیا اور مجھ سے پرائیوٹ طور پر بات کرنے کو کہا۔ جب میں کسی بات کے لئے اس کے قریب گیا تو اچانک  چاقو نظر آیا لیکن لوگوں نے مجھے گھیر لیا اور بروقت اسے پکڑ لیا۔

    یہ بھی پڑھیں | چین بین الاقوامی سطح پر متفرق مواقع پر پاکستان کے دفاع سے وابستہ رہنے کی حمایت کرتا ہے

     پولیس کی ابتدائی تفتیش سے معلوم ہوتا ہے کہ ملزم نے مفتی عثمانی پر حملہ نہیں کیا تھا اور نماز فجر کے بعد مفتی سے محض ملاقات کی خواہش کی تھی۔ 

    کورنگی کے ایس ایس پی شاہجہاں خان نے نجی نیوز کو بتایا کہ سیکیورٹی گارڈز نے تلاشی کے دوران اس کے قبضے میں خنجر پایا۔ سکیورٹی گارڈز نے اسے پکڑ لیا اور بعد میں اسے پولیس کے حوالے کردیا۔ 

    کورنگی کے ایس ایس پی شاہجہاں خان نے نجی نیوز کو بتایا کہ مشتبہ شخص کا بظاہر کوئی بدنیتی کا ارادہ نہیں تھا۔ ہم نے اس کے ڈاکٹر سے بھی ملاقات کی ہے جو پچھلے کچھ سالوں سے اس کء نفسیاتی پریشانیوں کا علاج کروا رہا ہے اور ملزم بھی دوائیں لے رہا تھا۔ 

    یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ملزم ‘کالا جادو’ کے زیر اثر ہے۔ اس افسر نے بتایا کہ اس وقت تک کوئی مقدمہ درج نہیں کیا گیا ہے اور تحقیقات مکمل ہونے تک ٹھیک سے کچھ نہیں کہا جاسکتا ہے جبکہ پولیس نے ملزم کے قبضے سے برآمد ہونے والا خنجر بھی سندھ پولیس کے فرانزک ڈویژن بھیج دیا ہے تاکہ اس بات کا پتہ لگ سکے کہ خنجر کو زہر ملا تھا یا نہیں۔

    یاد رہے کہ 35 سالہ عاصم لائق کراچی کے علاقے گلستان جوہر کا رہائشی ہے۔ ملزم نے کہا کہ وہ صرف گھریلو معاملے کے بارے میں مفتی تقی عثمانی سے ہی ملاقات کرنا چاہتا تھا اور مفتی عثمانی سے رجوع کرنے کے لئے ان سے دعائیں لینے آیا تھا۔

     وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے مفتی عثمانی کو فون کر کے ان کی خیریت دریافت کی۔ ایک ٹویٹ میں شیخ رشید نے کہا کہ انہیں مفتی عثمانی پر ہونے والے حملے پر “گہری تشویش” ہے۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x