لگتا ہے وزیراعظم عمران خان کو پی ای سی اے آرڈیننس پر بریفنگ نہیں دی گئی، لاہور ہائی کورٹ

اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے منگل کو کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو الیکٹرانک کرائمز ایکٹ 2016 (پی ای سی اے) ترمیمی آرڈیننس کے بارے میں مناسب طریقے سے بریفنگ نہیں دی گئی ہے۔ 

لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کے تبصرے الیکٹرانک جرائم کے قانون کے خلاف ایک درخواست کی سماعت کے دوران سامنے آئے جس کے بعد میڈیا اداروں اور سول سوسائٹی کی طرف سے احتجاج کیا گیا  جنہوں نے اسے “سخت قانون” قرار دیا ہے۔ 

 لاہور ہائی کورٹ بار کے سابق صدر مقصود بٹر نے حال ہی میں جاری ہونے والے آرڈیننس کے خلاف آئی ایچ سی سے رجوع کر لیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | آصف علی زرداری نے تحریک عدم اعتماد کے لئے جماعت اسلامی سے مدد مانگ لی  

 درخواست گزار کے وکیل حسن عرفان ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ لاہور ہائی کورٹ کے سامنے پہلے سے دائر درخواستوں میں سے اس درخواست میں دو مختلف نکات ہیں۔ 

انہوں نے دلیل دی کہ فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کے پاس دو نجی جماعتوں کے درمیان معاملے کو دیکھنے کا اختیار نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایجنسی صرف وفاقی حکومت سے متعلق معاملات کو دیکھ سکتی ہے۔

 چیف جسٹس آئی ایچ سی نے کہا کہ گزشتہ روز وزیراعظم عمران خان کی تقریر میں لگتا ہے کسی نے انہیں ٹھیک سے بریف نہیں کیا ہے اور پی ای سی اے کے علاوہ توہین عدالت کا قانون موجود ہے۔ 

ایسا لگتا ہے کہ اس سلسلے میں وزیر اعظم کی صحیح طریقے سے مدد نہیں کی گئی ہے۔

 درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ ایف آئی اے کو نجی تنازعات میں ملوث ہونے کا اختیار نہیں ہے۔ اسلام بھی اظہار رائے کی آزادی دیتا ہے۔ 

اس پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ یہاں قانون تنقید کرنے والوں کے خلاف استعمال ہوتا ہے۔ 

 ہائی کورٹ نے پی ای سی اے ترمیمی آرڈیننس کے خلاف درخواست کو دیگر درخواستوں کے ساتھ یکجا کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت 10 مارچ تک ملتوی کردی اور اٹارنی جنرل کو نوٹس جاری کردیا۔ 

عدالت نے وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کو ہدایت کی کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ ایس او پیز کے خلاف کوئی کارروائی نہ کی جائے۔ 

یاد رہے کہ پیر کو قوم سے اپنے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے کہا تھا کہ افواہیں ہیں کہ آزادی صحافت پر قدغن لگائی جا رہی ہے اور ایکٹ کے ذریعے لوگوں کو خاموش کیا جا رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔