لاہور ہائی کورٹ نے شہباز گل کے جسمانی ریمانڈ متعلق دوبارہ سماعت کا حکم دے دیا

شہباز گل کے خلاف بغاوت کے مقدمے

اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے منگل کے روز سیشن جج کو حکم دیا ہے کہ وہ پی ٹی آئی رہنما شہباز گل کے خلاف بغاوت کے مقدمے میں جسمانی ریمانڈ کے لیے نظرثانی درخواست کی دوبارہ سماعت کریں۔ 

اسلام آباد کے ایڈووکیٹ جنرل جہانگیر جدون نے 13 اگست کو آئی ایچ سی سے رجوع کیا تھا جس میں پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کے قریبی ساتھی شہباز گل کے جسمانی ریمانڈ میں توسیع کرتے ہوئے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ کے فیصلے کو کالعدم قرار دینے کا حکم دیا گیا تھا۔

 آج کی سماعت کے آغاز پر، لاہور ہائی کورٹ کے قائم مقام چیف عامر فاروق جسٹس نے حکومت کی درخواست اور شہباز گل کی درخواست کی سماعت دوبارہ شروع کی جس نے غداری کیس کو چیلنج کیا تھا۔ 

جوڈیشل مجسٹریٹ کے حکم کے خلاف

 جسٹس فاروق نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ جوڈیشل مجسٹریٹ کے حکم کے خلاف حکومتی درخواست قابل سماعت ہے اور سیشن عدالت کو پولیس کی درخواست پر آج ہی سماعت کرنے کا حکم دیا۔ 

 اہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے سیشن جج کو کیس کا فیصلہ میرٹ پر کرنے کا حکم دیا۔ 

آج سے پہلے، لاہور ہائی کورٹ نے اس کیس میں اپنے فیصلے کا احترام کیا۔ 

اسلام آباد ہائی کورٹ کے قائم مقام چیف جسٹس نے شہباز گل کی درخواست کے ساتھ حکومتی درخواست کی سماعت دوبارہ شروع کی۔ ۔

یہ بھی پڑھیں | نواز شریف نے پیٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کا بائیکاٹ کیا ہے، مریم نواز کا دعوی

یہ بھی پڑھیں | ڈالر بمقابلہ روپیہ: روپیہ کی قدر میں مسلسل اضافہ

اسلام آباد ہائی کورٹ کے قائم مقام

سماعت کے دوران اسلام آباد ہائی کورٹ کے قائم مقام چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ ملزم کا تعلق سیاسی جماعت سے ہے لیکن ملزم کوئی بھی ہو، اس عدالت کے سامنے بے معنی ہے۔ 

عدالت میں وکلاء کو سیاسی بحث سے روکتے ہوئے چیف جسٹس نے کہا کہ عدالت کیس میں صرف قانونی نکات کو دیکھے گی۔ 

 جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا کہ عدالت کو بتائیں جوڈیشل مجسٹریٹ کے فیصلے کے خلاف اپیل کیسے قابل سماعت تھی؟ ۔۔۔ جسٹس فاروق نے کہا کہ ملزم کو پولیس کے حوالے کرنا ایک سنگین معاملہ ہے۔ 

سیشن کورٹ کا فورم

پہلی نظر میں ایسا لگتا ہے کہ سیشن کورٹ کا فورم اس معاملے کی نگرانی کے لیے موجود ہے، چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سیشن کورٹ کو اس معاملے کو دیکھنا چاہیے، جوڈیشل مجسٹریٹ نے درست فیصلہ کیا یا غلط۔ 

سماعت کے دوران جج نے ریمارکس دیئے کہ ملزم ہمیشہ عدالت کا پسندیدہ بچہ ہوتا ہے۔ ۔

ریمانڈ کی مدت کا فیصلہ کرنا عدالت کا دائرہ اختیار نہیں، جسٹس فاروق نے کہا کہ جرم کتنا ہی سنگین کیوں نہ ہو، ریمانڈ کا معاملہ مجسٹریٹ کو دیکھنا ہوتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔