لاہور ہائیکورٹ نے حمزہ شہباز الیکشن کیس کی سماعت دوبارہ شروع کر دی

لاہور ہائی کورٹ کے لارجر بینچ نے بدھ کو پی ٹی آئی اور مسلم لیگ (ق) کی جانب سے حمزہ شہباز کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب کو چیلنج کرنے والی الگ الگ درخواستوں کی سماعت دوبارہ شروع کر دی ہے۔

جسٹس صداقت علی خان کی سربراہی میں پانچ رکنی بنچ حمزہ کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب

توقع ہے کہ جسٹس صداقت علی خان کی سربراہی میں پانچ رکنی بنچ حمزہ کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب پر فیصلہ آج سنائے گا۔ لاہور ہائیکورٹ کے بینچ میں جسٹس صداقت علی خان، جسٹس شاہد جمیل، جسٹس شہرام سرور، جسٹس ساجد محمود سیٹھی اور جسٹس طارق سلیم شیخ شامل ہیں۔ 

 سماعت کے دوران عدالت نے صدر کے وکیل ایڈووکیٹ احمد اویس کو روسٹرم پر بلایا اور سنگل بنچ کے صدر کے بارے میں دیے گئے ریمارکس پر ان سے رائے طلب کی۔ 

وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ صدر کے بارے میں سنگل بینچ کے ریمارکس کو کالعدم قرار دیا جائے۔ 

اس پر جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے استفسار کیا کہ کیا آپ کہنا چاہتے ہیں کہ صدر کو سنے بغیر ریمارکس دیے گئے۔

 جسٹس شاہد جمیل نے کہا کہ عدالت پہلے وزیراعلیٰ حمزہ شہباز کے وکیل کے دلائل سننا چاہتی ہے۔ انہوں نے حمزہ کے وکیل سے استفسار کیا کہ وہ دلائل دیں کہ آئین کے آرٹیکل 63-اے کی تشریح سے متعلق صدارتی ریفرنس میں سپریم کورٹ کے فیصلے کا اطلاق ماضی سے کیسے نہیں ہوتا؟ 

اس پر وزیراعلیٰ پنجاب کے وکیل نے جواب دیا کہ سپریم کورٹ کی واضح ہدایات تک ریفرنس میں فیصلے کا اطلاق ماضی سے نہیں ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں | اسحاق ڈار کو نیا پاکستانی پاسپورٹ مل گیا

یہ بھی پڑھیں | آصف علی زرداری نے “جیالوں” کو بلدیاتی انتخابات فیز 2 کے لئے تیار رہنے کا حکم دے دیا

ان کے وکیل نے کہا کہ درحقیقت حمزہ شہباز کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب کو چیلنج نہیں کیا گیا۔

درخواستوں میں مختلف واقعات کو چیلنج کیا گیا تھا لیکن ان کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب کو چیلنج نہیں کیا گیا۔

 اگر دوبارہ انتخابات کا حکم دیا گیا تو کون ہوگا وزیراعلیٰ؟

 لاہور ہائی کورٹ کی جانب سے وزیر اعلیٰ پنجاب کے انتخاب کو کالعدم قرار دینے اور دوبارہ انتخابات کا حکم دینے کی صورت میں ایک نیا سیاسی بحران پیدا ہونے کا امکان ہے۔ 

 اگر لاہور ہائیکورٹ نے موجودہ وزیراعلیٰ کے خلاف فیصلہ سنایا تو وہی امیدوار حمزہ شہباز اور پرویز الٰہی ایک بار پھر اس نشست کے لیے میدان میں اتریں گے۔ اعتماد کے ووٹ کے لیے نئے وزیر اعلیٰ کو 186 کا جادوئی ہندسہ حاصل کرنا ہوگا، جو ایوان کی طاقت کا نصف ہے۔ 

 اگر عدالت پنجاب اسمبلی کو 16 اپریل کی صورتحال پر بحال کرتی ہے تو ڈپٹی سپیکر وزیراعلیٰ کے انتخاب کی کارروائی کی نگرانی کریں گے۔ تاہم اگر ان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کی جاتی ہے تو چیئرمین کا پینل کارروائی کرے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں