مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

لاہور دھماکہ، عینی شاہدین کے انکشافات

حکام کے مطابق لاہور کے جوہر ٹاؤن میں ہونے والے دھماکے میں کم از کم 12 افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ 

عینی شاہدین نے بتایا کہ گلی میں صبح سے ایک موٹر سائکل لاوارث کھڑی تھی جبکہ امید کی جا رہی ہے کہ اسی میں بم مواد تھا جو ہھٹا کیونکہ بائک کے پرخچے اڑ چکے ہیں۔

نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے لاہور کے ڈپٹی کمشنر مدثر ریاض ملک نے بتایا کہ خواتین اور بچوں سمیت 12 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ زخمیوں میں پولیس اہلکار بھی شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ فوری طور پر واضح نہیں ہوسکا ہے کہ دھماکے کی وجہ کیا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ ہم صرف تحقیقات کرنے کے بعد ہی وجہ کا تعین کر سکیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس علاقے کو گھیرے میں لے لیا گیا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | آج ملک بھر کے بڑے شہروں میں ممکنہ طور پر مکمل لاک ڈاؤن لگ سکتا ہے 

نجی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے ، لاہور کے سی سی پی او غلام محمود ڈوگر نے بیان دیا کہ عہدیدار اس بارے میں کوئی تبصرہ نہیں کرسکتے ہیں کہ آیا یہ دھماکے کسی کو نشانہ بنانے کے لئے تھا یا ویسے ہی۔ ٹی وی فوٹیج میں دکھایا گیا ہے کہ یہ دھماکا رہائشی علاقے میں ہوا ہے ، جس سے آس پاس کے مکانات اور ٹوٹ پھوٹ کی عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے۔

  ایک عینی شاہد نے بتایا کہ اس کے گھر کو بری طرح نقصان پہنچا ہے۔ یہ گھر چھ سال پہلے تعمیر کیا گیا تھا۔ ہمارے پاس جانے کے لئے اور کوئی جگہ نہیں ہے۔ ایک اور عینی شاہد نے دعوی کیا ہے کہ موٹرسائیکل پر لگائے گئے آلہ میں دھماکہ ہوا ہے۔ 

ریسکیو 1122 کے ترجمان نے بتایا کہ فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوسکا ہے کہ دھماکے کی وجہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب تک ہم یہ طے نہیں کر سکے ہیں کہ گیس پائپ لائن پھٹ گئی یا یہ سلنڈر تھا۔ لیکن ہم نے چار افراد کو اسپتال منتقل کیا ہے جبکہ مزید زخمیوں کی توقع کی جا رہی ہے۔

 ایک بیان میں ، لاہور سی سی پی او نے بتایا کہ زخمیوں کو جناح اسپتال لے جایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دھماکے کی نوعیت کا تعین کیا جارہا ہے۔ انہوں نے عہدیداروں کو بھی ہدایت کی کہ وہ شہریوں کو دھماکے کی جگہ سے دور رکھیں تاکہ بچاؤ اور امدادی کاموں میں کوئی رکاوٹ پیدا نہ ہو۔ 

دوسری جانب وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے دھماکے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی کو واقعے کی تحقیقات اور رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی ہے۔ 

انہوں نے کہا ہے کہ دھماکے کے ذمہ داروں کو قانون کے کٹہرے میں لایا جانا چاہئے۔ انہوں نے حکام کو زخمیوں کو بہترین طبی سہولیات کی فراہمی کے ساتھ ساتھ حکام کو جناح اسپتال میں ایمرجنسی نافذ کرنے کی ہدایت بھی کی۔ 

انہوں نے اضافی آئی جی سی ٹی ڈی کو بھی دھماکے کے مقام پر پہنچنے کو کہا۔ وزیر داخلہ شیخ رشید نے بھی نوٹس لیا اور پنجاب کے چیف سکریٹری اور آئی جی کو رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی۔ وزیر نے زخمیوں کی جلد صحتیابی کے لئے دعا کی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔