لاہور حفیظ سینٹر میں آگ لگنے سے کروڑوں کا نقصان

لاہور شہر کے وسط میں واقع تجارتی مرکز حفیظ سنٹر میں ایک ہزار سے زیادہ دکانوں اور گوداموں کے ہاؤسنگ لیپ ٹاپ ، موبائل فونز اور دیگر میں سے کم از کم 500 دکانیں آگ لگنے سے جل گئی ہیں۔

یہ افسوس ناک واقعہ اتوار کے روز پیش آیا جس کی ابتدائی طور پر وجہ شارٹ سرکٹ بتائی جا رہی ہے۔

 ایمرجنسی ٹیموں نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے کم از کم 25 افراد کو بچایا جبکہ آگ لگنے کے اس واقعے میں کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔ 

تفذیلات کے مطابق آگ صبح سویرے کسی نامعلوم وقت پر لگی۔ فائر فائٹنگ صبح 6 بجکر 15 منٹ پر شروع ہوئی اور شام 8 بجے تک 14 گھنٹوں سے زیادہ دیر تک جاری رہی۔ ریسکیو 1122 ، پاکستان نیوی ، رینجرز ، سٹی ڈسٹرکٹ گورنمنٹ اور لاہور پولیس کے کم از کم 25 فائر ٹینڈرز نے امدادی کارروائی میں حصہ لیا۔ پانچ منزلہ عمارتوں میں موبائل فون ، کمپیوٹر ، لیپ ٹاپ ، یو پی ایس اور دیگر الیکٹرانک لوازمات کی ایک ہزار دکانیں ہیں۔ ایک اندازے کے مطابق دوسری ، تیسری اور چوتھی منزل پر واقع زیادہ تر 40 فیصد دکانوں کو مکمل طور پر نقصان پہنچا ہے۔ مزید برآں ، کہا جاتا ہے کہ 20 فیصد دکانوں کو جزوی نقصان پہنچا ہے۔ اطلاعات کے مطابق یہ آگ دوسری منزل سے شروع ہوئی اور اوپر کی طرف بڑھ گئی۔ 

  رپورٹ کے اندراج کے وقت یہ اطلاع ملی تھی کہ آگ پہلی منزل کی طرف بھی بڑھ رہی ہے۔ کم از کم 25 افراد عمارت کے اندر پھنس گئے۔ ان سب کو بحفاظت نکال لیا گیا۔ پھنسے ہوئے متاثرین میں سے بیشتر وہ مزدور تھے جو سامان چھوڑنے یا لینے کے مقصد سے پلازہ جاتے تھے۔ انہوں نے چھت پر پناہ لی اور بنیادی طور پر فائر سنورکلز کا استعمال کرکے انہیں بچایا گیا۔ پنجاب ایمرجنسی سروس (ریسکیو 1122) نے بتایا کہ انہیں صبح 6 بج کر 11 منٹ پر کال موصول ہوئی۔ جب امدادی کارکن موقع پر پہنچے تو آگ مکمل طور پر بھڑک رہی تھی۔ 

 آپریشن میں کل 25 فائر گاڑیاں ، تین خصوصی گاڑیاں اور 70 سے زیادہ امدادی کارکنوں نے حصہ لیا۔ ریسکیو 1122 کے ترجمان ، فاروق احمد نے بتایا کہ آگ بھاری آگ میں بدل گئی کیونکہ پلازہ انتہائی آتش گیر مادے سے بھرا ہوا تھا۔ اس کے علاوہ ، عمارت میں فائر فائٹنگ کا نظام بھی نصب نہیں تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کسی کو معلوم نہیں ہے کہ اصل کس وقت میں یہ آگ شروع ہوئی۔

 ایک دکاندار نے بتایا کہ لوگوں نے آگ کی شدت کو دیکھتے ہوئے رحم کے لئے اذانیں بھی شروع کردیں۔ عمارت اور اس کے گردونواح میں آگ کا منظرنامہ تھا۔

پھنسے ہوئے لوگ عمارت کے چھت کی طرف بڑھے جبکہ ساری عمارت حتٰی کہ چھت بھی گھنے دھوئیں سے بھری ہوئی تھی۔ وہاں سے وہ روتے ہوئے مدد کے لئے چیخ رہے تھے۔ فائر سنورکلز کا استعمال کرتے ہوئے بچانے والے ان کو نکالنے میں مصروف تھے۔ یہ ایک خوفناک منظر تھا۔

 امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لئے پولیس کی بھاری نفری بھی موقع پر پہنچ گئی۔ 

 دریں اثنا ، حکومت پنجاب نے آگ لگنے کے واقعے پر  14 رکنی تحقیقاتی کمیٹی  تشکیل دے دی ہے۔ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *