عورتیں کورونا وائرس کو مردوں سے زیادہ سیرئیس لیتی ہیں، رپورٹ

جمعرات کے روز نیشنل اکیڈمی آف سائنسز کی ریسرچ میں شائع ہونے والی نئی تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ جینیاتی اور امیونولوجیکل عوامل کے ساتھ ساتھ ، مرد اور خواتین کے درمیان طرز عمل کا فرق بھی کورونا وائرس کے فرق کو تشکیل دیتا ہے۔

 آٹھ دولت مند ممالک میں 21،000 سے زیادہ افراد کے مارچ / اپریل میں ہونے والے ایک سروے کے مطابق ، خواتین کورونا وائرس کو ایک سنگین مسئلہ سمجھنے اور گھر میں رہنے اور ماسک پہننے جیسی پابندیوں پر مردعں سے زیادہ متفق اور ان پر عمل کرنے کا امکان رکھتی ہیں۔

 اگرچہ انفیکشن کی شرحوں میں صنفی فرق نہیں ہے لیکن مرد اس وائرس کو کم سیرئیس لیتا ہے جبکہ عورت اس متعلق زیادہ سنجیدہ ہے۔ 

مصنفین کا کہنا ہے کہ صحت عامہ کے پیغامات کو صنف کے مطابق تخصیص کرنے کی ضرورت پڑسکتی ہے۔ مصنفین نے لکھا ،ہے کہ جرمنی اور نیوزی لینڈ جیسے ممالک میں خواتین کی سربراہی میں عام طور پر کوویڈ19 کے بارے میں زیادہ موثر انداز میں جواب دیا گیا ہے جبکہ اس کے برعکس ، بدترین ریکارڈ رکھنے والے کچھ ممالک ، جن میں امریکہ اور برازیل شامل ہیں ، کی رہنمائی ایسے مرد کر رہے ہیں جنہوں نے مضبوط مردانگی کے رویوں کی پیش گوئی کی ہے اور ماسک پہننے جیسے احتیاطی طریقوں کی ضرورت کو مسترد کردیا ہے۔

 اس تحقیق میں کورونا وائرس کے خلاف خواتین کے زیر اہتمام یا سربراہی میں چلنے والی تحاریک اور کمپینز کو زیادہ موثر قرار دیا گیا ہے جبکہ مردوں کے زیر اثر چلنے والی کمپینز کے نتائج خواتین کے تحت چلنے والی کمپینز سے کم ثابت ہوئے ہیں۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *