مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

عمران خان نے تین سالہ دور حکومت کی کارکرگی سامنے رکھ دی

وزیراعظم عمران خان نے اپنی حکومت کی اہم کامیابیوں کو اجاگر کرتے ہوئے اپنی تین سالہ کارکردگی رپورٹ جمعرات کو جاری کر دی ہے۔

 اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ان کی حکومت کی توجہ برآمدات کو بہتر بنانے ، صنعت کاری کو فروغ دینے اور پاکستان میں کاروباری مواقع پیدا کرنے پر ہے۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ ہزاروں کم مراعات یافتہ افراد کو غربت سے نکال کر بلا سود قرضے ، صحت انشورنس ، تکنیکی تعلیم اور سستی رہائش کی پیشکش کریں گے۔ انہوں نے مختلف شعبوں میں بڑھتی ہوئی آٹومیشن کے ساتھ بدعنوانی کا مقابلہ کرنے کے عزم کا اظہار بھی کیا ہے۔ صنعت ، تعلیم ، صحت اور زراعت میں اصلاحات ان کی تقریر میں توجہ کے کچھ شعبے تھے۔

یہ بھی پڑھیں | وکٹم ، ٹک ٹکر ، ایف آئی آر میں غلط گھر کا ایڈریس لکھیں

 حکومت نے 251 صفحات پر مشتمل ایک رپورٹ جاری کی جس میں 2018 سے 2021 تک وزارتوں ، ڈویژنوں اور محکموں سمیت 44 عوامی اداروں کی کامیابیوں کی تفصیل ہے۔ کورونا کے دوران سب سے زیادہ متاثر ہونے والے 15 ملین خاندانوں کے لیے احساس ایمرجنسی کیش پروگرام ، کم آمدنی والے گروپوں کے لیے سستی رہائشی منصوبے ، ہیلتھ کارڈ ، کسانوں کے لیے سبسڈی ، نوجوانوں کے لیے مہارت اور وظیفے کے اقدامات اور موسمیاتی تبدیلی کے اقدامات حکومت کے کچھ اہم اقدامات تھے۔ 

…. سماجی تحفظ کے پروگرام ….

 حکومت کے 203 ارب روپے احساس ایمرجنسی کیش اقدام نے انتہائی غربت اور معاشی مشکلات کا شکار 15 ملین خاندانوں (تقریبا  109 ملین افراد) کو 12000 روپے (78 ڈالر) کی ایک وقتی نقد گرانٹ فراہم کی تھی۔ سترہ  شیلٹر ہومز کے اجراء نے 1.8 ملین سے زیادہ مستحقین کو بستر اور ناشتے کی سہولیات فراہم کی ہیں۔ عمران خان نے ایک اور اقدام کے تحت سوپ کچن پروگرام بھی شروع کیا جو ضرورت مندوں کو مفت کھانے کے لیے تیار کرے گا۔ .

… سستی رہائش…

حکومت نے مستحق خاندانوں کے لیے کم لاگت کی رہائشی سکیمیں شروع کیں جس کے تحت وہ اخوت اسلامی مائیکرو فنانس کے ذریعے 500،000 روپے تک مالی امداد حاصل کر سکتے ہیں۔ اخوت کو 7 ارب روپے کے فنڈز جاری کیے گئے ہیں۔ جون 2021 تک کم از کم 7،000 گھر اور یونٹ مکمل ہو چکے ہیں۔ 

…. تعلیم…. 

عمران خان نے یکساں قومی نصاب کو ایک اہم اقدام قرار دیا۔ حکومت نے کم آمدنی والے طلباء کے لیے اسکالرشپ پروگرام شروع کیے ہیں۔ مالی سال 2020-21 میں تقریبا 69 69،000 طلباء کو 8.46 ارب روپے کے اخراجات پر مالی امداد دی جا رہی ہے۔ تکنیکی اور پیشہ وارانہ تربیت میں اصلاحات اور مہارت اور فاصلاتی تعلیم کے پروگرام بھی کچھ اقدامات میں شامل ہیں۔

 …. انفارمیشن ٹیکنالوجی…. 

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ 3 سالوں کے دوران پاکستان کے آئی ٹی سیکٹر نے نمایاں پیش رفت کی ہے۔ آئی ٹی کمپنیوں کی تعداد جون 2021 تک بڑھ کر 4،641 ہو گئی ہے جو جون 2018 میں 1،762 کے مقابلے میں ہے جبکہ کمپیوٹر سروسز اور کال سینٹر سروسز پر مشتمل آئی ٹی مالی سال 20-21 کے اختتام تک برآمدات کی ترسیلات زر 2 بلین امریکی ڈالر تک پہنچنے کی توقع ہے۔ 

۔۔۔ صنعتیں ۔۔۔

مالی سال 2021 کے دوران صنعتی شعبے میں ترقی کا تخمینہ 3.6 فیصد لگایا گیا ہے جس میں “بڑے پیمانے پر مینوفیکچرنگ میں 9.3 فیصد اور چھوٹے پیمانے پر 8.3 فیصد کی نمایاں نمو” ہے۔ حکومت موثر ، پائیدار اور جامع صنعتی ترقی کے حصول کے لیے موبائل ڈیوائس مینوفیکچرنگ ، آٹو انڈسٹری کی ترقی میں سہولت فراہم کر رہی ہے۔

 …. تجارت …. 

وزیراعظم عمران خان مینوفیکچررز اور کاروباری دوستانہ اقدامات کے لیے مراعات کے ساتھ “میڈ ان پاکستان” کے مقصد کو آگے بڑھا رہے ہیں۔ حکومت کا مقصد درآمدی بل کو یکسر کم کرنا اور برآمد کو بڑھانا ہے۔ مالی سال 2021 میں پاکستان نے 25.3 بلین امریکی ڈالر مالیت کا سامان برآمد کیا جو کہ ملکی تاریخ میں سب سے زیادہ سامان کی برآمد ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔