طالبان سے مذاکرات کے دوران افغان شہریوں کی ہلاکتوں میں اضافہ، رپورٹ

ایک رپورٹ کے مطابق امریکہ کی ڈھیل اور طالبان سے مذاکرات کے بعد فضائی حملوں میں افغان شہریوں کی ہلاکتیں 2017 سے بڑھ گئی ہیں۔

 براؤن یونیورسٹی میں لاگت جنگ منصوبے کے شریک ڈائریکٹر نیتا سی کرافورڈ نے بتایا کہ سن 2019 میں امریکی اور اتحادی فضائی حملوں میں سالانہ ہلاک ہونے والے عام شہریوں کی تعداد 330 فیصد بڑھ کر 700 شہریوں تک پہنچ گئی ہے۔ 

فروری 2020 میں طالبان کے ساتھ امن معاہدہ کرنے کے بعد امریکہ نے فضائی حملےنا کرنے کا اعلان کیا تھا۔ لیکن افغان مسلح افواج نے طالبان کے ساتھ مذاکرات کے دوران حملوں کو تیز کر دیا ہے جب کہ ہوائی حملوں سے کُل اموات کم ہوچکی ہیں لیکن اب حملے کابل کی افواج کی طرف سے آرہے ہیں اور حالیہ مہینوں میں اس میں تیزی آئی ہے۔ 

کرافورڈ نے لکھا کہ افغان فضائیہ اب اپنی تاریخ میں کسی بھی وقت سے زیادہ افغان شہریوں کو نقصان پہنچا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2020 کے پہلے چھ ماہ میں اے ایف کے فضائی حملوں میں 86 افغان شہری ہلاک اور 103 زخمی ہوئے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی گستاخانہ خاکوں کے خلاف بین الاقوامی عدالت جانے کے مصر کے فیصلے کی حمایت

اس کے بعد کے تین مہینوں میں ، جب دوحہ میں افغان طالبان کی بات چیت جاری رہی ، تو ہلاکتوں میں شدت پیدا ہوگئی  جس میں 70 شہری ہلاک اور 90 زخمی ہوئے۔ انہوں نے مذاکرات کے لئے فائر بندی پر زور دیا جبکہ دونوں فریقوں نے معاہدے پر تبادلہ خیال کیا تاکہ شہریوں کو زیادہ سے زیادہ زخمی ہونے سے بچایا جاسکے۔ 

لیکن ریاستہائے متحدہ کی جانب سے اپنی فوجوں کے انخلا میں تیزی آ رہی ہے تو کچھ لوگوں کو خدشہ ہے کہ طالبان کابل کی افواج پر مزید دباؤ ڈالنے کا فائدہ اٹھا سکتے ہیں اور انتقامی کارروائیوں کو جنم دے رہے ہیں۔

 کرفورڈ نے لکھا کہ جب تک جنگ بندی نہیں ہوتی ، دونوں فریق حکمت عملی سے فائدہ اٹھانے کی کوششیں جاری رکھیں گے جبکہ بات چیت جاری ہے۔  

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x