ضمنی الیکشن کی نو سیٹوں پر اکیلے عمران خان الیکشن لڑیں گے

ضمنی انتخابات میں حصہ لینے کا فیصلہ

پی ٹی آئی کے چیئرمین اور سابقہ وزیراعظم عمران خان نے جمعے کو ان تمام نو نشستوں کے لیے ہونے والے ضمنی انتخابات میں اکیلے حصہ لینے کا فیصلہ کیا ہے جو قومی اسمبلی کے اسپیکر کی جانب سے ان کی پارٹی کے قانون سازوں کے استعفے منظور کیے جانے کے بعد خالی ہوئی ہیں۔ 

 پی ٹی آئی چیئرمین نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کی جانب سے 25 ستمبر کو ان حلقوں میں ضمنی انتخابات کے اعلان کے بعد اپنا فیصلہ جاری کیا۔ 

 پی ٹی آئی چیئرمین کے تمام خالی ہونے والی این اے کی نشستوں پر الیکشن لڑنے کے فیصلے نے بصورت دیگر مدھم سمجھے جانے والے ضمنی انتخابات کی داغ بیل ڈال دی ہے۔ 

 این اے کی نو نشستوں پر الیکشن لڑنے کا فیصلہ پی ٹی آئی کے آفیشل سوشل میڈیا ہینڈل کے ساتھ ساتھ پارٹی کے کئی رہنماؤں کی جانب سے ٹوئٹر پر خبریں شیئر کرنے کے بعد سامنے آیا۔

 فیصلے کے منظر عام پر آنے کے فوراً بعد سوشل میڈیا پر تبصروں کا سیلاب آگیا۔ 

 ان میں یہ بھی شامل تھا کہ حکومت 9 نشستوں کے لیے اپنے مشترکہ امیدواروں کے طور پر کس کا انتخاب کرے گی اور کیا وہ تمام نو حلقوں میں صرف ایک ہیوی ویٹ کا اعلان کرکے عمران کے چیلنج کو قبول کرنے کی ہمت کرے گی۔ 

تاہم کچھ دوسرے لوگوں نے سوال اٹھایا کہ اگر عمران کے کاغذات نامزدگی تکنیکی بنیادوں پر مسترد کیے گئے تو کیا ہوگا کیونکہ اس سے حکومت کی طرف واضح برتری حاصل ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں | ایف آئی اے تحریک انصاف کے فارن فنڈنگ کیس کی تحقیقات کرے گی، مریم اورنگزیب

یہ بھی پڑھیں | الیکشن کمیشن نے چوہدری شجاعت کو ق لیگ کا صدر برقرار رکھا

سیاسی ہیوی ویٹ کو شکست

سال 2018 میں، عمران نے این اے کی پانچ نشستوں پر کامیابی حاصل کر کے تاریخ رقم کی۔ عمران خان نے لاہور (این اے 131) میں مسلم لیگ (ن) کے سعد رفیق اور اسلام آباد (این اے 53) میں سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سمیت سیاسی ہیوی ویٹ کو شکست دی تھی۔

انہوں نے بنوں (این اے-35)، کراچی کے این اے-243 اور میانوالی (این اے-95) میں اپنے آبائی حلقے سے بھی کامیابی حاصل کی تھی۔ 

 ای سی پی نے اس سے قبل اس سال اپریل میں پارٹی سربراہ کو وزارت عظمیٰ کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد پی ٹی آئی کے ایم این ایز کے 131 میں سے 11 استعفے منظور کر لیے تھے۔ ای سی پی کے شیڈول کے مطابق امیدوار 10 سے 13 اگست تک کاغذات نامزدگی جمع کرا سکتے ہیں۔ 

 ای سی پی 14 اگست تک نامزد امیدواروں کی حتمی فہرست جاری کرے گا۔ 17 اگست تک ریٹرننگ افسران سے ان کی تصدیق کی جائے گی اور امیدوار 20 اگست تک اپنی اپیلیں دائر کر سکتے ہیں۔ 25 اگست کو ای سی پی امیدواروں کے خلاف اعتراضات کا فیصلہ کرے گا جبکہ 17 اگست کو امیدواروں کے خلاف اعتراضات کا فیصلہ کیا جائے گا۔

 26 کو امیدواروں کی حتمی فہرست آویزاں کی جائے گی۔  امیدواروں کو انتخابی نشانات 29 اگست کو جاری کیے جائیں گے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔