شہباز گل کے اسسٹنٹ کی بیوی کو بھی گرفتار کر لیا گیا

شہباز گل کے اسسٹنٹ کی اہلیہ کو ڈرائیور کے گھر پر چھاپے

 پولیس نے جمعرات کو شہباز گل کے اسسٹنٹ کی اہلیہ کو ڈرائیور کے گھر پر چھاپے کے دوران “ہنگامہ آرائی اور قانون نافذ کرنے والوں پر حملہ” کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔ 

 اسسٹنٹ ڈرائیور (اظہر) کے گھر پر چھاپے کا مقصد موبائل فون چھیننا تھا تاہم اظہار فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا۔ 

 گرفتاری پر تنقید کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے ٹوئٹ کیا کہ میں شہباز گل کے ڈرائیور اظہار کی اہلیہ کے وحشیانہ اور غیر قانونی اغوا کی شدید مذمت کرتا ہوں، جو اب خواتین کے تھانے میں قید ہے۔

میں اپنی قانونی برادری سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ کیا بنیادی حقوق اب نہیں رہے؟ پنجاب ایک خوفناک انجام سے دوچار ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ “امپورٹڈ حکومت” میڈیا اور خوف کو استعمال کر کے عوام کو خوفزدہ کر رہی ہے تاہم وہ ملک کو غیر مستحکم کرنے میں ہی کامیاب ہو رہی ہے۔ پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ واحد حل آزادانہ اور منصفانہ انتخابات ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | تحریک انصاف سارا پاکستان بند کر سکتی ہے، عمران خان کی وارننگ

یہ بھی پڑھیں | شہباز گل کا دو روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

اسلام آباد کیپیٹل پولیس کے مطابق، اظہار کے گھر پر چھاپہ مارا گیا تاکہ وزیر اعظم کے سابق معاون خصوصی برائے سیاسی رابطے کے خلاف بغاوت کے مقدمے میں “شواہد اکٹھے کیے” جائیں۔ 

 اسلام آباد کیپٹل پولیس نے اپنے آفیشل اکاؤنٹ کے ذریعے ٹویٹ کیا کہ “شہباز گل کے ڈرائیور کے گھر پر چھاپہ مارنے اور اسے گرفتار کرنے کا عمل قانونی ہے۔ اسلام آباد کیپٹل پولیس اس کیس سے متعلق تمام شواہد اکٹھے کر رہی ہے۔ 

 اس نے مزید کہا کہ پولیس اپنا کام کرے گی اور جہاں بھی ضرورت ہو قانونی کارروائی کرے گی۔

یاد رہے کہ منگل کے روز، شہباز گل کو اسلام آباد پولیس نے بنی گالہ چوک کے باہر “ریاستی اداروں کے خلاف بیانات دینے اور لوگوں کو بغاوت پر اکسانے کے جرم میں گرفتار کیا تھا۔

 پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما کے خلاف اسلام آباد کے تھانہ کوہسار میں مقدمہ درج کر لیا گیا۔ دیگر الزامات کے علاوہ، ایف آئی آر میں لوگوں کو ریاستی اداروں اور ان کے سربراہوں کے خلاف اکسانے سے متعلق شقیں شامل کی گئیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔