شہباز گل کو ضمانت مل گئی

شہباز گل کی ضمانت منظور

اسلام آباد ہائی کورٹ نے جمعرات کو پی ٹی آئی رہنما شہباز گل کی ضمانت منظور کر لی جو ان کے خلاف بغاوت اور عوام کو ریاستی اداروں کے خلاف اکسانے کے الزام میں درج کیا گیا تھا۔ 

سابق وزیراعظم عمران خان کے سابق معاون شہباز گل کو 9 اگست کو اس وقت گرفتار کیا گیا جب انہوں نے فوج کے اندر بغاوت کا مطالبہ کیا تھا اور افسران سے کہا تھا کہ وہ ایک نجی ٹی وی چینل کے بلیٹن کے دوران اعلیٰ کمان کے بعض احکامات کی خلاف ورزی کریں۔ 

شہباز گل کو اس وقت حراست میں لیا گیا تھا جب عدالتوں نے ان کی ضمانت کی درخواستیں مسترد کر دی تھیں۔ 

مقدمہ بد نیتی اور سیاسی انتقام پر مشتمل

 آئی ایچ سی کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے سماعت کی صدارت کی جب پی ٹی آئی رہنما کے وکیل سلمان صفدر نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ مقدمہ “بد نیتی” اور “سیاسی انتقام” پر مشتمل تھا۔

 وکیل نے مزید کہا کہ تفتیش مکمل ہو چکی ہے۔ سارا کیس ایک تقریر پر مبنی ہے۔

 جسٹس من اللہ نے استفسار کیا کہ کیا گل نے ایف آئی آر میں بیان کیے گئے الفاظ کہے ہیں اور کیا مسلح افواج کو سیاست میں گھسیٹنا جائز ہو سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | کچھ دنوں تک پنجاب میں اپنی حکومت بنائیں گے، ن لیگی رہنماؤں کا دعوی

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد ہائی کورٹ نے غداری کیس میں شہباز گل کی درخواست ضمانت منظور کر لی

مسلح افواج کے خلاف بیان

 جج نے ریمارکس دیئے کہ یہ محض تقریر نہیں ہے۔

شہباز گل کے وکیل نے استدلال کیا کہ ان کے مؤکل نے مسلح افواج کے خلاف ایک بھی بیان نہیں دیا اور دعویٰ کیا کہ ان کی تقریر کے مختلف حصوں کو خفیہ مقاصد کی وجہ سے سیاق و سباق سے ہٹ کر کیا گیا۔

 وکیل نے شہباز گل کی تقریر کا ایک ٹرانسکرپٹ بھی پڑھا اور دلیل دی کہ درخواست گزار کی طرف سے ان کے بیانات کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا گیا، جو اس نے مزید کہا کہ وہ متاثرہ فریق بھی نہیں تھا۔ 

مسلح افواج کی جانب سے مقدمہ درج

 انہوں نے کہا کہ “کسی اور کو مسلح افواج کی جانب سے مقدمہ درج کرنے کا حق نہیں ہے۔

 اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ مسلح افواج اتنی کمزور نہیں ہیں کہ کسی کے غیر ذمہ دارانہ بیانات ان پر اثر انداز ہوں۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ شہباز گل کے غیر ذمہ دارانہ بیانات کو کسی بھی طرح درست قرار نہیں دیا جا سکتا۔ 

عدالت نے استفسار کیا کہ کیا مقدمہ درج کرنے سے پہلے حکومت سے اجازت لی گئی؟

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔