شہباز گل معافی مانگنے کے لئے تیار ہے، وکیل

اداروں کے خلاف بیان کے کیس میں ضمانت کی سماعت کے دوران شہباز گل کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ شہباز گل کے بیان سے کوئی غلط فہمی ہوئی تو معافی مانگنے کو تیار ہیں۔ 

 اداروں میں بغاوت کے مقدمے میں تحریک انصاف کے رہنما شہباز گل کی درخواست ضمانت پر سماعت ایڈیشنل سیشن کورٹ کے جج ظفر اقبال کی عدالت میں ہوئی جہاں انسپکٹر ارشد ریکڑ عدالت میں پیش ہوئے۔ 

ے عدالت سے رپورٹ دیکھنے کی اجازت

 اجلاس کے دوران شہباز گل کے وکیل برہان معظم نے عدالت سے رپورٹ دیکھنے کی اجازت طلب کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے خلاف شواہد جاننا چاہتے ہیں، جس پر عدالت نے پولیس کو ملزمان کے خلاف رپورٹ وکیل کو پیش کرنے کا حکم دیا۔ 

 سماعت کے بعد دوبارہ جرح کے موقع پر شہباز گل کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ پولیس نے 161 کا بیان نہیں دکھایا جس پر عدالت نے تفتیشی افسر کو بیانات دکھانے کا حکم دیا۔

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ڈی ایم لیڈرز کے خلاف درخواست خارج کر دی

یہ بھی پڑھیں | “صرف اسحاق ڈار ڈیلیور کر سکتا ہے” نواز شریف کا یقین

عدالت نے غیرت مندی کے باعث غیر رشتہ داروں کو کمرے سے نکالنے کا حکم دیا۔ تحریک انصاف کے رہنما علی نواز اعوان، سیف اللہ نیازی، صدا عباسی اور دیگر کمرہ عدالت سے باہر چلے گئے۔

 شہباز گل کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ 8 اگست کو غلام مرتضیٰ شانڈیو کی شکایت پر مقدمہ درج کیا گیا تھا جس میں فورسز اہلکاروں پر تقسیم کا الزام لگایا گیا تھا۔

 وکیل نے اپنے دلائل میں کہا کہ ریکارڈ میں مختلف جگہوں سے پوائنٹس چن کر کیس درج کیا گیا۔ اس پورے بیان پر کہیں نہ کہیں غلط فہمی تھی، شہباز گل اس غلط فہمی کو دور کرنے کو تیار ہیں۔ شہباز گل بھی معافی مانگنے کو تیار ہیں لیکن انہیں مختلف نکات اٹھانے اور بغاوت کے الزامات لگانے کا حق کیسے حاصل ہوا؟ 

شہباز گل کی جانب سے جمع کرائی گئی درخواست ضمانت پر دلائل دیتے ہوئے وکیل برہان اعظم ملک نے عدالت کو بتایا کہ شہباز گل اداروں کے خلاف بیانات پر معافی مانگنے کو تیار ہیں۔ شہباز گل کے بیان سے کوئی غلط فہمی ہوئی ہے تو معافی مانگنے کو تیار ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔