شادی سے لیکر سر کے دوپٹے تک، ملالہ یوسفزئی نے انٹرویو کے دوران کیا کچھ کہا؟

ملالہ یوسف زئی  نے برٹش ووگس جون کو انٹرویو کے دوران شادی سے لے کر سر پہ دوپٹہ رکھنے تک کے تمام معاملات پر بات کی جس میں سے بالخصوص شادی والا معاملہ انتہائی تنازعہ اختیار کر گیا ہے۔ 

ملالہ یوسفزئی نے جو کچھ کہا اس کا لب لباب مندرجہ ذیل ہے:

 ملالہ یوسفزئی،  23 سالہ ، جو کوویڈ19 کے دوران فارغ التحصیل ہوئی ہے ، اپنے والدین کے گھر سے آکسفورڈ یونیورسٹی میں اپنا آخری سال مکمل کرنے کے لئے برمنگھم منتقل ہوگئی۔  اس کو یونیورسٹی میں کچھ وقت اپنے دوستوں کے ساتھ پوکر کھیلنے اور میکڈونلڈس سے جانے کا موقع ملتا رہا۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان جنرل اسمبلی اقوام متحدہ میں فلسطین کا مسئلہ اٹھائے گا       

ملالہ نے بتایا کہ میں واقعی اپنی عمر کے لوگوں کے ساتھ نہیں رہی کیونکہ میں اس طالبان واقعے کے بعد دنیا بھر کے سفر میں رہی، کتاب پر کام کیا اور ایک دستاویزی فلم بنا رہی تھی جبکہ اس کے علاوہ دیگر کافی کچھ کام کئے۔

 یونیورسٹی کے آخر میں مجھے اپنے لئے کچھ وقت ملا۔ اس کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہ اس کے والدین کیسے اپنی بیٹی کی شادی کرنا چاہتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ مجھے ابھی تک سمجھ نہیں آتی ہے کہ لوگوں کو شادی کرنے کی ضرورت کیوں پڑتی ہے؟ اگر آپ اپنی زندگی میں کوئی فرد رکھنا چاہتے ہیں تو آپ کو شادی کے کاغذات پر دستخط کرنے کی کیا ضرورت ہے؟ کیا صرف پارٹنر بن کر ساتھ نہیں رہا جا سکتا؟ 

خواتین کے حقوق اور لڑکیوں کی تعلیم جیسے سنگین معاملات پر دستاویزی فلموں کے علاوہ ملالہ نے کہا کہ وہ مزاح بھی بنانا چاہتی ہیں۔ اپنی نئی پروڈکشن کمپنی ‘ایکسٹرا سرکلر’ کے اجراء کے بارے میں بات کرتے ہوئے ، انہوں نے مزید کہا کہ میں چاہتی ہوں کہ یہ شو تفریحی ہوں اور تفریحی چیزوں کو میں دیکھوں۔ اگر میں ان پر ہنس نا سکی یا ان سے لطف اندوز نہیں ہوئی تو میں انہیں اسکرین پر نہیں ڈالوں گی۔ 

ملالہ نے کہا کہ ہیڈ سکارف (دوپٹہ) پہننے کا مطلب اس کے مسلمان عقائد سے زیادہ ہے۔ یہ ہمارے لئے پشتونوں کی ثقافتی علامت ہے لہذا یہ نمائندگی کرتا ہے کہ میں کہاں سے آئی ہوں۔ اور مسلمان لڑکیاں یا پشتون لڑکیاں یا پاکستانی لڑکیاں ، جب ہم اپنے روایتی لباس کی پیروی کرتے ہیں تو ہم مظلوم ، یا بے آواز ، یا سرپرستی کے تحت زندگی گزارنے والے سمجھے جاتے ہیں۔ میں سب کو بتانا چاہتی ہوں کہ اپنی ثقافت کے اندر بھی آپ کی اپنی آواز ہوسکتی ہے اور آپ کو اپنی ثقافت میں برابری مل سکتی ہے۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x