سیلاب سے مالاکنڈ کے پاورہاؤس متاثر

سرکاری اور نجی املاک کو نقصان

سرکاری اور نجی املاک کو نقصان پہنچانے کے علاوہ، سیلاب سے متاثرہ مالاکنڈ ڈویژن کے سوات، دیر، شانگلہ اور چترال کے اضلاع کے تمام ہائیڈل مائیکرو پاور ہاؤسز کو نقصان پہنچا ہے جو سرحد رورل سپورٹ پروگرام کی مالی مدد سے نصب کیے گئے تھے۔ 

  ابتدائی تخمینہ کے مطابق چترال، اپر دیر، سوات اور شانگلہ کے اضلاع میں ایس آر ایس پی کی جانب سے نصب کیے گئے 18 پاور ہاؤسز کو 26 اگست کو ان پہاڑی علاقوں میں مون سون کی شدید بارشوں سے آنے والے سیلاب میں نقصان پہنچا جس سے 217 ملین روپے کا نقصان ہوا۔ 

مکمل اوور ہالنگ کی ضرورت ہوگی

 کچھ تنصیبات دھل چکی ہیں اور انہیں مکمل اوور ہالنگ کی ضرورت ہوگی جبکہ دیگر کی مرمت کی جاسکتی ہے لیکن اس کے لیے کافی فنڈز درکار ہوں گے۔ چترال میں پانچ پاور ہاؤسز تھے جن میں مستوج، ایون، بونی، بمبوریت اور کوہ شامل تھے جن سے صرف چترال میں 74 ملین روپے کا نقصان ہوا۔

 سوات میں مدین، بحرین، اترور سمیت سات پاور ہاؤسز اور کالام میں تین یعنی عشوران، جنگل ان اور آریانہ سیلاب میں بہہ گئے۔ 

 زیادہ تر علاقوں میں سیلاب نے انفراسٹرکچر، آلات، انٹیک اور پاور چینلز کے کچھ حصے، پاور ہاؤسز کی ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن لائنوں کو نقصان پہنچایا۔

یہ بھی پڑھیں | لاہور: میٹرک امتحان میں فیل ہونے پر لڑکی نے خودکشی کر لی

یہ بھی پڑھیں | خیبرپختونخواہ: سیلاب کی وجہ سے 6 لاکھ افراد بےگھر

سوات میں ایس آر ایس پی کی تنصیبات

 سوات میں ایس آر ایس پی کی تنصیبات کو 74 ملین روپے کا نقصان ہوا جو کہ کسی بھی دوسرے ضلع سے زیادہ ہے۔

 شانگلہ ضلع میں سیلاب نے تین ہائیڈل مائیکرو پاور ہاؤسز کو متاثر کیا، جن میں بیلہ اجمیر، دامورائی اور کیکور دمورائی شامل ہیں اور ایس آر ایس پی کو 18 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔

 اپر دیر ضلع کے تین پاور ہاؤسز بشمول تھل کمراٹ، ترپتر اور تھل کے نقصانات کا تخمینہ 26 ملین روپے تک لگایا گیا۔

بقایا جات کا مزید بھاری مالی بوجھ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے

 انفراسٹرکچر اور آلات کو پہنچنے والے ان نقصانات کے علاوہ، ہاؤسز کو 44,386,841 روپے کے بقایا جات کا مزید بھاری مالی بوجھ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے جس میں 13,414,270 ملین روپے کمرشل اور 30,972,571 روپے گھریلو صارفین کی ملکیت ہیں۔ 

 یہ پاور ہاؤسز مقامی ندیوں پر بنائے گئے تھے اور انہوں نے خوشحالی کا آغاز کیا تھا اور خاص طور پر سیاحتی مقامات میں مقامی حرکیات کو تبدیل کیا تھا۔ ایس آر ایس پی کی انتظامیہ اور ٹیم کے ارکان نے دور دراز اور دشوار گزار علاقوں میں پاور ہاؤس قائم کرنے کے لیے بین الاقوامی عطیہ دہندگان سے فنڈز اکٹھا کرنے کے لیے سخت جدوجہد کی تھی۔ 

 انہیں پاور ہاؤسز کو چلانے اور صارفین کو سنبھالنے میں متعدد چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑا۔ ملک کے باقی حصوں کے مقابلے میں، ہاؤسز نے اپنے صارفین کو کم نرخوں پر بجلی کی پیشکش کی۔ کالام اور اس کی سیاحت میں بڑی تبدیلی لانے کی دو بڑی وجوہات تھیں، ایک 35 کلو میٹر بحرین-کالام سڑک کی تعمیر اور بجلی کی فراہمی، جو کہ ایس آر ایس پی نے کالام میں بجلی پیدا کرنے والے دو چھوٹے پاور ہاؤس بنا کر فراہم کی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔