مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

سیاسی اختلافات سے بالاتر ہو کر کراچی سرکلر ریلوے پراجیٹ پر کام کرنا ہو گا، عمران خان

 کراچی کراچی

کراچی سرکلر ریلوے (کے سی آر) پراجیکٹ کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے امید ظاہر کی ہے کہ سندھ اس منصوبے کے لیے پرعزم رہے گا اور وفاقی حکومت کے ساتھ تعاون کرے گا۔ 

کے سی آر کی سنگ بنیاد تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ سیاسی اختلافات سے بالاتر ہو کر کراچی سرکلر ریلوے پراجیٹ پر کام کرنا ہو گا۔ دنیا کے ہر ملک کا ایک شہر اس کی خوشحالی اور ترقی کا باعث بنتا ہے اور پاکستان کے لیے وہ شہر کراچی ہے۔ 

عمران خان نے کہا کہ کراچی کئی مسائل کی وجہ سے زوال کا شکار ہے جس سے پورا ملک متاثر ہوا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ٹرانسپورٹ نظام کسی ملک کی ترقی میں بہت بڑا کردار ادا کرتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | وکٹم ، ٹک ٹکر ، ایف آئی آر میں غلط گھر کا ایڈریس لکھیں

انہوں نے مزید کہا کہ کے سی آر اس کے حصول کی طرف ایک بڑا قدم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کراچی کا دوسرا بڑا مسئلہ پانی کی قلت ہے۔ کے-4 منصوبہ اس مسئلے کو حل کرنے میں مدد دے گا۔

 ایسے وقت میں جب کہ عمران خان کی جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کئی وجوہات کی بنا پر پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی سندھ حکومت کے ساتھ اختلافات رکھتی ہے، یہ بیانات بہت اہمیت کے حامل ہیں۔ 

عمران خان ہے  نے کہا کہ وفاقی حکومت اور سندھ حکومت کو کراچی کی ترقی کے لیے اپنے سیاسی اختلافات کو ایک طرف رکھتے ہوئے مل کر کام کرنا ہوگا۔ سیاسی اختلافات کے باوجود ہمیں اپنے ملک اور سندھ کی خاطر آگے بڑھنا ہوگا۔ ہم سب آپس میں جڑے ہوئے ہیں۔ وفاقی حکومت اکیلے کچھ کام نہیں کر سکتی ، جبکہ سندھ حکومت مرکز کے تعاون کے بغیر کچھ کام اکیلے نہیں کر سکتی۔

عمران خان نے وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ سے بنڈل آئی لینڈ پروجیکٹ پر نظر ثانی کا مطالبہ کرتے ہوئے مزید کہا کہ سندھ اس سے فائدہ اٹھائے گا۔ وزیر اعظم نے مزید کہا کہ یہ منافع ، روزگار اور کراچی سے دباؤ کو کم کرے گا۔

 وفاقی حکومت کے وژن کے مطابق سرکلر ریلوے کی نہ صرف بحالی کی جا رہی ہے بلکہ اسے وسعت اور جدید بنایا جا رہا ہے۔ کے سی آر کے 30 اسٹیشن رہائشی ، صنعتی اور دفتری علاقوں کو جوڑیں گے۔ یہ منصوبہ 207 ارب روپے کی لاگت سے تین سالوں میں مکمل ہونے کا تخمینہ ہے۔ 

کے سی آر کا ٹریک بغیر کراسنگ کے بنایا جائے گا جس پر ٹرینیں 80 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلیں گی۔ یہ روزانہ تقریبا پانچ لاکھ مسافروں کو لے جائے گا۔

یاد رہے کہ شہر کراچی عام شہری سہولیات جیسے پینے کا صاف پانی ، سڑکیں ، ٹرانسپورٹ ، میونسپل گورننس ، صفائی ، بنیادی ڈھانچہ ، پیشہ ورانہ تربیت اور دیگر تمام سہولیات سے محروم ہے جو کاروبار کے لئے بنیادی اور سازگار سمجھی جاتی ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔