سعودی عرب نے اسرائیل کو اپنی ائیر سپیس استعمال کرنے کی اجازت دے دی

 سعودی عرب نے اسرائیل جانے اور آنے والی تمام پروازوں کو اپنی ائیر سپیس (فضائی حدود) استعمال کرنے کی اجازت دے دی ہے جو کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی سعودیہ پہنچنے سے چند گھنٹے قبل خارجہ پالیسی کے طور پر کامیابی گنی جا رہی ہے۔ 

تیل کی عالمی منڈی میں ہنگامہ آرائی

 بائیڈن، جنھیں امید ہے کہ تیل کی عالمی منڈی میں ہنگامہ آرائی کے درمیان ان کا دورہ خلیجی ریاست کے ساتھ امریکی تعلقات کو بحال کرے گا، نے سعودی اعلان کو ایک “تاریخی فیصلہ” قرار دیا اور اس معاہدے کو بروکر کرنے میں مدد کرنے کا سہرا اپنی انتظامیہ کو دیا ہے۔

 یہ اعلان بائیڈن کو بطور صدر خطے کے اپنے پہلے دورے میں کامیابی فراہم کرتا ہے جب ان کے پیشرو ڈونلڈ ٹرمپ نے اسرائیل اور چار عرب ممالک کے درمیان امن معاہدوں میں مدد کی تھی۔ 

 تاہم، سعودی عرب نے 2020 کے ابراہیم معاہدے میں شامل ہونے سے روک دیا تھا، جس میں متحدہ عرب امارات، بحرین اور مراکش نے اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کیے تھے۔ سعودی عرب نے اصرار کیا ہے کہ اسرائیل ریاض کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے سے پہلے فلسطینیوں کے ساتھ اپنے تنازعات کو حل کرے۔ 

 سعودی عرب نے پہلے ہی اسرائیل جانے والی کچھ پروازوں کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دے دی تھی۔ اس فیصلے میں اسرائیل اور ایشیا کے درمیان سفر کے اوقات میں تیزی سے کمی کرنے والی تمام ایئر لائنز شامل ہوں گی۔

یہ بھی پڑھیں | یوم جمہوریت: ترکی میں ناکام بغاوت کا چھٹا سال 

یہ بھی پڑھیں | مودی کی امریکہ، اسرائیل اور یو اے ای کے حکمرانوں سے ملاقات، ایجنڈا کیا ہے؟

 یہ اعلان مملکت اور اسرائیل کے درمیان بحیرہ احمر کے دو جزیروں میں حفاظتی انتظامات پر امریکہ کی ثالثی میں ہونے والی بات چیت کے بعد سامنے آیا ہے جنہیں مصر نے 2017 میں سعودی عرب کو منتقل کیا تھا۔ اسرائیل اور مصر کے درمیان امن معاہدے کے تحت جزائر پر تعینات کیا گیا تھا۔ 

 سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنانے میں اپنی دلچسپی کا اشارہ دیا ہے۔

 دونوں ممالک ایران کو اپنے علاقائی حریف کے طور پر دیکھتے ہیں اور تہران نے یمن میں حوثی باغیوں کی حمایت کی ہے جنہوں نے سعودیہ میں تنصیبات پر حملہ کیا ہے۔ سعودی عرب یمن کی خانہ جنگی میں باغیوں کے خلاف فوجی مداخلت کی قیادت کر رہا ہے۔ 

 امریکہ اور اسرائیل خطے میں ایران کے خلاف قریبی فوجی اور دفاعی تعاون کی حوصلہ افزائی کرنا چاہتے ہیں۔ سعودی عرب کے پہلے ہی اسرائیل کے ساتھ خفیہ انٹیلی جنس اور سیکورٹی تعلقات ہیں، لیکن بائیڈن کے دورے کے دوران نئے تعاون کے بارے میں کوئی اعلان متوقع نہیں ہے۔ 

یاد رہے کہ بائیڈن جمعے کو اسرائیل سے بحیرہ احمر کے شہر جدہ پہنچنے کے بعد سعودی رہنماؤں سے ملاقات کریں گے جس میں ولی عہد شہزادہ اور ان کے وزراء کے ساتھ علیحدہ ملاقات بھی شامل ہے۔ وہ ہفتے کو خلیجی سربراہی اجلاس میں شرکت کریں گے جس میں مصر اور اردن کے رہنما بھی شامل ہوں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں