سرکاری آفیسر کا پی ٹی آئی کے خلاف کمنٹ؛ وزیر اعظم نے تحقیقات کا حکم دے دیا

سرکاری آفیسر کا پی ٹی آئی کے خلاف کمنٹ؛ وزیر اعظم نے تحقیقات کا حکم دے دیا

 پاکستان پاکستان

وزیراعظم عمران خان

نے منگل کے روز سوشل میڈیا پر حکمران جماعت تحریک انصاف کے طرز حکمرانی پر تنقید کرنے والے سینئر بیوروکریٹ کے خلاف اعلیٰ اختیاراتی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق سینئر سرکاری ملازم نے اپنی ایک مبینہ فیس بک پوسٹ میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کا موازنہ افغانستان میں طالبان کی حکومت سے کیا۔

 پی ٹی آئی کے خلاف کچھ “قابل اعتراض تبصرے” کرتے ہوئے، سینئر جوائنٹ سیکرٹری (کیبنٹ ڈویژن) حماد شمیمی نے لکھا کہ پی ٹی آئی اقتدار میں آئی لیکن حکومت کو چلانا نہیں جانتی ہے بلکل اسی طرح جس طرح طالبان کو حکومت حاصل کرنے کے بعد چلانے کی سمجھ نہیں آ رہی ہے۔ 

 پیر کو سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ ڈویژن افضل لطیف کی طرف سے جاری کردہ الزامات کے بیان کے مطابق، ان کا عہدہ سول سرونٹس (ایفشینسی اینڈ ڈسپلن) رولز 2020 کے تحت بدانتظامی کے مترادف تھا۔ افضل لطیف کے ان کے خلاف انکوائری کے حکم نامے میں لکھا گیا ہے کہ: “وزیراعظم اپنی حیثیت سے ‘اتھارٹی’ کے طور پر مسٹر ثناء اللہ عباسی ، ڈائریکٹر جنرل، ایف آئی اے، اسلام آباد کو بطور انکوائری آفیسر مقرر کرتے ہوئے خوش ہیں کہ حماد شمیمی اس کے خلاف انکوائری

یہ بھی پڑھیں | چین نے امریکہ کو پیچھے چھوڑ دیا؛ امیر ترین ملک بن گیا   

 حکم نامے میں مزید کہا گیا ہے کہ ڈی جی ایف آئی اے 60 دنوں میں انکوائری مکمل کریں گے، جب کہ انکوائری افسر کو واضح نتائج کے ساتھ انکوائری مکمل ہونے کے سات دن کے اندر اتھارٹی کو تحقیقاتی رپورٹ پیش کرنی ہوگی۔

 اس کے بعد اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے نوٹیفکیشن میں حماد شمیمی کی مبینہ پوسٹ کو اردو میں دوبارہ لکھا گیا جس میں انہوں نے فیس بک پر لکھا تھا: “پی ٹی آئی اور [افغان] طالبان کے درمیان ایک مماثلت یہ ہے کہ دونوں کو یہ سمجھ نہیں آ رہی کہ اقتدار سنبھالنے کے بعد ہی حکومت کیسے چلائی جائے۔ 

 سینئر سرکاری عہدیداروں نے بتایا کہ مذکورہ الزامات کی روشنی میں حماد شمیمی کے خلاف مزید انکوائری کے لئے ای ڈی نے پیر کو ایک علیحدہ نوٹیفکیشن جاری کیا تھا۔

 اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کی جانب سے سینئر جوائنٹ سیکریٹری کے خلاف ‘الزامات کے بیان’ کی کاپی جاری کی گئی۔ 

ای ڈی نے اس سال کے شروع میں عہدیداروں کو حکومت کی اجازت کے علاوہ سوشل میڈیا پلیٹ فارم استعمال کرنے سے روک دیا تھا۔ نوٹیفکیشن میں کہا گیا تھا کہ ہدایات کا مقصد کسی سرکاری ادارے کی طرف سے سوشل میڈیا کے کسی بھی تعمیری اور مثبت استعمال کی حوصلہ شکنی کرنا نہیں ہے۔

 سیکرٹری ای ڈی افضل لطیف نے نوٹیفکیشن میں تفصیلات بتائی ہیں کہ سرکاری ملازمین کو گورنمنٹ سرونٹ (کنڈکٹ) رولز، 1964 کے تحت ہدایات دی گئی ہیں، جس کی تعمیل کے لیے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز سمیت مختلف میڈیا فورمز میں سرکاری ملازمین کے استعمال کو کنٹرول کیا گیا ہے۔ 

Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin
cropped-urdu_khabar_logo.png

ہمارے نیوز لیٹر میں شامل ہوں۔

تازہ ترین مضامین، نوکریاں، مفت، تفریحی خبریں براہ راست اپنے ان باکس میں حاصل کریں۔

170000 سبسکرائبرز یہاں ہیں۔