سانحہ آرمی پبلک سکول کو 8 برس بیت گئے

سانحہ آرمی پبلک سکول کو 8 برس بیت گئے

آرمی پبلک سکول پشاور پر دہشت گردوں کے حملے کو 8 سال بیت گئے ہیں جبکہ شہداء کے والدین آج بھی سوگوار اور انصاف کے منتظر ہیں۔ 

سولہ دسمبر 2014 کو اسی دن دہشت گردوں نے پشاور کے آرمی پبلک سکول پر حملہ کر کے معصوم بچوں کو نشانہ بنایا تھا اور 100 سے زائد طلباء کو بے دردی سے شہید کر دیا تھا۔ شہداء کے والدین آج بھی صدمے سے دوچار ہیں، جن والدین کے بچے بچ گئے وہ بھی اس ہولناک دن کو کبھی نہیں بھول سکے ہیں۔ 

حکومت کا نیشنل ایکشن پلان کا آغاز

 اپنے پیاروں کو کھونے کے بعد قوم نے نئے عزم کے ساتھ دہشت گردوں سے لڑنے کا فیصلہ کیا جب کہ حکومت نے انسداد دہشت گردی کے لیے نیشنل ایکشن پلان کا بھی آغاز کیا۔ دہشت گردوں نے مستقبل کے معماروں کو نشانہ بنا کر ملک اور سیکیورٹی اداروں کی روح کو توڑنے کی کوشش کی لیکن ملک بھر میں جاری تعلیمی سرگرمیاں ملک دشمنوں کو پیغام دے رہی ہیں کہ قوم کے عزم میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، شہداء کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی۔ 

دہشت گردوں کے وحشیانہ حملے میں دسویں جماعت کا طالب علم اسفند خان بھی گولیوں کا نشانہ بنا۔

یہ بھی پڑھیں | ایف آئی اے نے عامر لیاقت کی تیسری بیوی دانیہ شاہ کو  گرفتار کر لیا 

یہ بھی پڑھیں | پنجاب میں آٹے کا بحران شدت اختیار کر گیا 

شہداء کی یادیں رہ گئیں

دہشت گردوں نے علم کی شمع جلانے والے سکول ٹیچر فرحت عباس کو بھی شہید کر دیا۔ فرحت عباس گولیوں کی آواز سن کر اپنے بچوں کی طرف بھاگے جو کراس سکول میں تھے۔ انہیں سیڑھیوں میں گولی مار دی گئی۔ آج بھی شہید فرحت عباس کی یاد ان کے اہل خانہ کو اداس کر دیتی ہے۔ 

 شہید حسن زیب کے والد نے اپنے بیٹے کے زیر استعمال تمام چیزیں ایک کمرے میں رکھی ہوئی ہیں۔ بچپن کی تصاویر بھی حسن زیب کے کمرے کی زینت بنتی ہیں، جہاں پرفیوم کے ساتھ ساتھ وہ یونیفارم اور دیگر اشیاء بھی پہنا کرتے تھے، اب اس گھر میں صرف حسن زیب کی یادیں رہ گئی ہیں۔ 

آڈیٹوریم ہال میں دہشت گرد

 قوم کی بہادر بیٹی بینش نے آڈیٹوریم ہال میں دہشت گردوں کے سامنے ڈٹ کر بچوں کی جانیں بچاتے ہوئے جام شہادت نوش کیا۔ 

 ان شہداء میں 15 سالہ اسامہ طاہراواں بھی شامل ہے، اسامہ کے والدین کے زخم ابھی تازہ ہیں۔ اسامہ کی ذاتی اشیاء آج بھی کمرے کی زینت بنی ہوئی ہیں، میڈلز سے لے کر کتابیں اور کیمرے اس کی یاد دلاتے ہیں۔ 

 واضح رہے کہ 16 دسمبر 2014 کو آرمی پبلک اسکول ورسک روڈ پشاور کے اندر دہشت گردوں نے قتل عام میں اسکول کی طالبات اور پرنسپل طاہرہ قاضی شہید سمیت 150 افراد کو قتل کردیا تھا۔

زرين

زین ایک ایوارڈ یافتہ سابق شکاگو سٹی ہال کے سیاسی رپورٹر اور کالم نگار ہیں۔