مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    ریپ کا تعلق کپڑوں سے نہیں ہے، بلاول بھٹو کی وزیر اعظم پر تنقید

    پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے وزیر اعظم عمران خان کے ریپ کے کپڑوں سے تعلق سے متعلقہ بیان پر تنقید کی اور جنسی تشدد کے خلاف یکساں قوانین بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔

    تفصیلات کے مطابق منگل کو پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے وزیر اعظم عمران خان پر زور دیا ہے کہ وہ بولنے سے پہلے ہر ایک لفظ کو محتاط انداز میں بیان کریں۔

     اسلام آباد میں پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ، بلاول بھٹو زرداری نے اسلام آباد میں پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر میڈیا کو بتایا کہ لباس کا عصمت دری سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جنسی زیادتی کرنے والوں اور زندہ بچ جانے والوں کے لئے یکساں قانون ہونا چاہئے۔

     یاد رہے کہ امریکی نیٹ ورک ایچ بی او کے انٹرویو میں عمران خان نے کہا تھا کہ “چھوٹے کپڑے” پہننے والی عورتیں مردوں میں فتنہ پیدا کرسکتی ہیں جو شاید خود پر قابو نہیں رکھ پاتے۔ اسی طرح ، انہوں نے بچوں میں موبائل فون کے پھیلاؤ کو نابالغوں کے ساتھ جنسی زیادتی میں اضافے کی ایک وجہ قرار دیا۔ 

    یہ بھی پڑھیں | آج ملک بھر کے بڑے شہروں میں ممکنہ طور پر مکمل لاک ڈاؤن لگ سکتا ہے 

    پی پی پی کے چیئرمین نے کہا کہ ہمیں ہمیشہ زندہ بچ جانے والے کی مدد کرنی چاہئے اور مجرم کو کوئی بہانہ نہیں دینا چاہئے۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ جب کوئی وزیر اعظم ایسی باتیں کرتا ہے تو یہ پیغام جاتا ہے کہ آپ اس جرم کے مرتکب ہو رہے ہیں تبھی آپ زندہ بچ جانے والے کو ہی ذمہ دار ٹھہرا رہے ہیں۔

     انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی ثقافت واضح ہے کہ مرد اور خواتین کو عوام میں کس طرح لباس پہننا چاہئے۔  انہوں نے کہا کہ آپ کو اقتدار میں آنے سے پہلے والے  بیانات کا موازنہ اب اپنے نئے بیانات سے کرنا چاہئے۔

     انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم تو تحریک طالبان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کو دہشت گرد کہنے کے لئے بھی تیار نہیں جبکہ آرمی پبلک اسکول حملے میں بچوں کی موت کا ذمہ دار وہ شخص ہے۔ 

    انہوں نے پچھلے ہفتے ایک افغان نشریاتی ادارے کے ساتھ ایک انٹرویو جس کے دوران شاہ محمود قریشی نے اسامہ بن لادن سے متعلقہ سوال کے جواب میں “میں اسے پاس کروں گا” کہا تھا، پر سوال کیا کہ ان کا ماننا ہے کہ القاعدہ کا بانی اسامہ بن لادن ایک “شہید” ہے۔ 

    بلاول بھٹو نے کہا کہ اسامہہ بن لادن نے 1993 میں مرحوم بے نظیر بھٹو پر حملہ کرنے کی کوشش کی تھی  اور صرف ایک سال بعد “بغاوت” کی کوشش بھی کی تھی۔

    پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے مزید کہا کہ یہ القاعدہ کے سابق سربراہ تھے جنہوں نے عالمی سطح پر اسلام کے تصور کو نقصان پہنچایا تھا۔ انہوں نے کہا کہ اسلام امن کا مذہب ہے اور پاکستان کی قیادت کی رائے کو اس کی عکاسی کرنی چاہئے۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x