روپیہ کی قدر میں کمی کا انٹر بینک مارکیٹ میں نیا ریکارڈ

روپے نے روس-یوکرین تنازعہ کے بعد اپنی قدر کو مزید گرا دیا ہے۔ منگل کے روز انٹر بینک مارکیٹ میں تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں اور گندم کی قلت کی پیش گوئی کی وجہ سے کرنسی امریکی ڈالر کے مقابلے میں 178.61 روپے کی تازہ ترین سطح پر آگئی ہے جس سے پاکستان کی درآمدی لاگت بڑھ جائے گی۔ 

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے مطابق، پیر کو روپیہ 178.31 روپے پر بند ہوا تھا۔

 عارف حبیب لمیٹڈ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ روپیہ یومیہ 0.27 فیصد گرا ہے جبکہ جولائی 2021 میں رواں مالی سال کے آغاز سے اب تک یہ 11.8 فیصد کم ہے۔

 ایکسپریس ٹریبیون سے بات کرتے ہوئے، اے اے گولڈ کموڈٹیز کے ڈائریکٹر عدنان آگر نے کہا کہ روپیہ پر بہت دباؤ ہے کیونکہ بین الاقوامی مارکیٹ میں ڈالر کو مضبوط کرنے والے کئی عوامل ہیں۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ امریکی ڈالر دنیا کی بیشتر کرنسیوں کے مقابلے میں چڑھ رہا ہے۔ اس کے علاوہ، عالمی سطح پر تیل کی قیمتوں میں تیزی سے اضافہ سے بھی روپے پر دباؤ بڑھا رہا ہے۔

گندم کا بحران بھی عروج پر ہے، جس سے زرمبادلہ کی منڈی میں ہلچل مچ گئی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ تمام اشیاء کی قیمتیں بڑھ رہی ہیں، جس سے پوری دنیا میں مہنگائی میں بڑے اضافے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | طالبان نے عالمی خواتین دن کے موقع پر افغان خواتین کو کیا پیغام دیا؟ 

 انہوں نے مزید کہا کہ مقامی تجزیہ کار بھی مہنگائی میں اضافے کی پیش گوئی کر رہے ہیں۔

 ان کا خیال ہے کہ جب تک روس اور یوکرین کے درمیان جنگ بندی پر اتفاق نہیں ہو جاتا اور تیل کی قیمتیں گر نہیں جاتی، روپیہ دباؤ میں رہے گا۔ 

 عارف حبیب کموڈٹیز کے سی ای او اور منیجنگ ڈائریکٹر احسن مہانتی نے کہا کہ کرنٹ اکاؤنٹ کا زیادہ خسارہ اور بڑھتے ہوئے درآمدی بل کے نتیجے میں روپے کی قدر میں کمی واقع ہوئی ہے۔ 

 انہوں نے انکشاف کیا کہ روس یوکرین جنگ کی وجہ سے پاکستان کی ٹیکسٹائل برآمدات کو خطرات لاحق ہیں۔ مزید برآں، سیمنٹ کی برآمدات میں کمی آ رہی ہے کیونکہ عالمی سطح پر کوئلے کی قیمتوں میں اضافے نے اسے مہنگا کر دیا ہے جس سے درآمدی آرڈرز کم ہو گئے ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ جغرافیائی سیاسی تنازعہ پاکستان کی مجموعی برآمدات کو متاثر کرے گا، جس کا اثر مقامی کرنسی پر پڑ رہا ہے۔ 

 الفا بیٹا کور کے چیف ایگزیکٹو آفیسر خرم شہزاد نے کہا کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ غیر پائیدار سطح تک بڑھ گیا ہے اور اس سے روپے پر دباؤ بڑھ گیا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ بڑھتے ہوئے درآمدی بل کی وجہ سے ڈالر کی ضرورت بڑھ رہی ہے جس سے روپیہ گر رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔