روس کی پاکستان کو گیس کے ساتھ گندم کی فراہمی کی آفر

روس کی پاکستان کو گندم کی پیشکش

وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا ہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے تباہ کن سیلاب کے بعد ملک کی معیشت کو پہنچنے والے نقصان کو مدنظر رکھتے ہوئے گیس کی فراہمی کے علاوہ پاکستان کو گندم کی پیشکش کی ہے۔ 

خواجہ آصف نے مزید کہا کہ روسی صدر نے بھی وزیراعظم کو دعوت دی ہے اور دورہ ہوگا۔ 

انہوں نے کہا ہے کہ وہ ہمیں گیس دے سکتے ہیں۔ روس نے کہا کہ ان کے پاس وسط ایشیائی ممالک میں گیس پائپ لائنیں ہیں اور پائپ لائنوں کو افغانستان کے راستے پاکستان تک بڑھایا جا سکتا ہے۔ یہ مذاکرات ہوئے ہیں۔

 وزیر دفاع نے یہ بھی کہا کہ روس نے یوکرین میں جاری تنازع پر پاکستان کے موقف کو سراہا ہے۔ 

شہباز شریف دورہ چین کریں گے

 انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف نومبر کے پہلے ہفتے میں چینی صدر شی جن پنگ کی دعوت پر چین کا پہلا دورہ کریں گے۔ 

وزیر دفاع نے کہا کہ صدر شی نے شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہی اجلاس کے موقع پر سمرقند، ازبکستان میں دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات کے دوران دعوت دی۔

آصف نے مزید کہا کہ وزیراعظم کی چینی صدر سے ملاقات انتہائی کامیاب رہی۔ انہوں نے کہا کہ صدر شی نے چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے کو آگے بڑھانے کے عزم کا اظہار کیا اور پاکستان کو ایک “ہر موسم کا اسٹریٹجک دوست” قرار دیا۔

یہ بھی پڑھیں | حکومت کی جانب سے آج پیٹرولیم قیمتوں کا اعلان متوقع 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان: سیلاب سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد پندرہ سو گئی 

تمام اراکین نے پاکستان کی مدد کے لیے آمادگی

خواجہ آصف نے یہ کہتے ہوئے اختتام کیا کہ ایس سی او کے تمام اراکین نے پاکستان کی مدد کے لیے آمادگی ظاہر کی ہے کیونکہ وہ تباہ کن سیلاب سے دوچار ہے۔ 

 یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب پاکستان اور امریکہ کے درمیان کشیدہ تعلقات کو بحال کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔ 

امریکی وزیر خارجہ کے ایک سینئر مشیر نے حال ہی میں اسلام آباد کا دورہ کیا تھا، جب کہ امریکی صدر جو بائیڈن انتظامیہ نے ایف 17 کے ساز و سامان کی 450 ملین ڈالر کی فروخت کی منظوری دی تھی کہ واشنگٹن اسلام آباد کے ساتھ ورکنگ ریلیشن شپ برقرار رکھنا چاہتا ہے۔ 

روسی صدر ولادیمیر پیوٹن

 اس سب کے درمیان شہباز شریف کی جمعرات کو روسی صدر ولادیمیر پیوٹن اور جمعہ کو چینی صدر شی جن پنگ سے ملاقات اہم ہے اور یہ ظاہر کرتی ہے کہ پاکستان بڑی طاقتوں کے ساتھ اپنے تعلقات میں نازک توازن برقرار رکھنے کی کوشش کر رہا ہے۔ 

شہباز شریف سے ملاقات کے بعد پیوٹن کے دفتر سے جاری کردہ ٹرانسکرپٹ میں روس کی پاکستان کے ساتھ تعلقات کو مزید گہرا کرنے کی خواہش کا اظہار کیا گیا تھا۔ اسی دوران، صدر شی نے شہباز سے اپنی پہلی ملاقات میں پاکستانی وزیر اعظم کو “عملیت پسندی اور کارکردگی کا حامل شخص” قرار دیا۔ 

شہباز شریف نے پیوٹن کی بھی تعریف کی اور روس کو ایک “سپر پاور” اور اس کے صدر کو “لفظوں کا آدمی” قرار دیا۔ 

اپنی طرف سے، روسی صدر نے شہباز شریف سے ملاقات کا آغاز اپنے بڑے بھائی نواز شریف کے ساتھ اپنے ورکنگ ریلیشن شپ کو یاد کرتے ہوئے کیا، جب وہ وزیراعظم تھے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔