رانا ثناء اللہ کے خلاف کیس جھوٹا تھا، فواد چوہدری نے نیا پنڈارا باکس  کھول دیا

پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اور سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کا اعتراف

  پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اور سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری نے اعتراف کیا ہے کہ وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ کے خلاف منشیات اسمگلنگ کا مقدمہ من گھڑت تھا اور درج نہیں ہونا چاہیے تھا۔

 ایکسپریس نیوز کے پروگرام ’کل تک‘ میں گفتگو کرتے ہوئے چوہدری نے کہا کہ ثناء اللہ کے خلاف ہیروئن اسمگلنگ کا مقدمہ پی ٹی آئی نے درج نہیں کیا۔ 

جب مسلم لیگ ن کے رہنما کے اس دعوے پر تبصرہ کرنے کے لیے کہا گیا کہ منشیات عمران خان اور شہزاد اکبر نے فراہم کی ہیں تو چوہدری نے کہا کہ ان کا اس کیس سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ 

پی ٹی آئی رہنما سے یہ سوال بھی کیا گیا کہ اگر پی ٹی آئی حکومت نے ن لیگ کے رہنما کے خلاف مقدمہ درج نہیں کیا تو کس نے کیا؟ ۔۔۔ اس پر فواد چوہدری نے اینکر سے کہا کہ وہ رانا ثناء اللہ سے پوچھ لیں کیونکہ وہ پارلیمنٹ میں اس بارے میں کھل کر بات کرتے رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | سیاست سے دور رہیں ؛ آرمی چیف کی فوج کو ہدایت

یہ بھی پڑھیں | الیکشن کمیشن حمزہ شہباز کے ساتھ مل کر ن لیگ کو جتوانے کی کوشش کر رہا ہے، عمران خان  

وزیر برائے انسداد منشیات شہریار آفریدی کے اس عہد سے بھی خود کو الگ کر لیا

 سابق وزیر اطلاعات نے اس وقت کے وزیر برائے انسداد منشیات شہریار آفریدی کے اس عہد سے بھی خود کو الگ کر لیا، یہ کہتے ہوئے کہ یہ کرنا درست نہیں تھا۔

فواد چوہدری نے مزید کہا کہ اس وقت جب یہ کیس کابینہ میں آیا تو انہوں نے متعلقہ لوگوں کو بتایا تھا کہ یہ غلط ہے جس پر وہ اجلاس چھوڑ کر چلے گئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ جب انہوں نے رانا ثناء اللہ کیس کے بارے میں دریافت کیا تو فوراً احساس ہوا کہ یہ مقدمہ بے کار ہے اور ایسا مقدمہ کبھی درج نہیں ہونا چاہیے تھا۔ 

 واضح رہے کہ رانا ثناء اللہ کو جولائی 2019 میں اینٹی نارکوٹکس فورس نے گرفتار کیا تھا جس نے ان کی گاڑی سے 15 کلو گرام ہیروئن برآمد کرنے کا دعویٰ کیا تھا جب وہ فیصل آباد سے لاہور جاتے ہوئے موٹر وے پر راوی ٹول پلازہ کے قریب سے برآمد ہوئے تھے۔ 

 پہلی معلوماتی رپورٹ کنٹرول آف نارکوٹک سبسٹینس ایکٹ 1997 کے سیکشن 9(سی) کے تحت درج کی گئی تھی، جس میں سزائے موت یا عمر قید یا 14 سال تک قید کی سزا کے ساتھ ساتھ 10 لاکھ روپے تک جرمانہ بھی ہو سکتا ہے۔ 

 انہیں لاہور ہائی کورٹ نے 24 دسمبر 2019 کو ضمانت دی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں