حکومت کی نواز شریف کی میڈیکل رپورٹ کو “مشکوک” قرار دینے کی کوشش

موجودہ حکومت سابق وزیراعظم نواز شریف کی لاہور ہائی کورٹ میں جمع کرائی گئی ’مشکوک‘ میڈیکل رپورٹس کو منظر عام پر لانا چاہتی ہے۔

 گزشتہ ہفتے، حکومت نے لاہور ہائی کورٹ میں ایک درخواست دائر کرنے کا اعلان کیا تھا، جس میں مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کے خلاف اپنے بھائی اور سزا یافتہ سابق وزیر اعظم شریف کی مقررہ مدت کے اندر واپسی کی ضمانت کے لیے قانونی کارروائی کی درخواست کی گئی تھی، لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا۔

 کابینہ کے ایک رکن نے بتایا کہ حکومت کے اس اقدام کا اصل مقصد سابق وزیراعظم نواز شریف کی ’’مشکوک‘‘ میڈیکل رپورٹس کو بے نقاب کرنا ہے۔ دوم، حکومت لاہور ہائی کورٹ کو شہباز شریف کے خلاف اپنے بھائی کی واپسی کے حوالے سے وعدہ پورا نہ کرنے پر توہین عدالت کی کارروائی شروع کرنے پر آمادہ کرنا چاہتی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم عمران خان نے احتساب میں ناکامی کو تسلیم کر لیا

 معلوم ہوا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے شریف کی میڈیکل رپورٹس کی تصدیق کے لیے طبی ماہرین سے مشاورت شروع کی تھی جو گزشتہ سال اگست میں لاہور ہائیکورٹ کو بھیجی گئی تھیں۔ ذرائع نے بتایا کہ ابتدائی نتائج کے مطابق میڈیکل رپورٹس شریف کی جسمانی حالت سے مطابقت نہیں رکھتیں کیونکہ رپورٹس کو عدالت کے اطمینان کے لیے ترتیب دیا گیا ہے۔ 

 کابینہ کے ایک سینئر رکن نے کہا کہ اگر یہ ثابت ہو جاتا ہے کہ نواز شریف کی میڈیکل رپورٹس من گھڑت ہیں تو حکومت ان کے چیک اپ کے لیے اپنی میڈیکل ٹیم برطانیہ بھیج سکتی ہے۔ “ہم وہاں اس کی میڈیکل رپورٹس کو چیلنج بھی کر سکتے ہیں۔” وزیر نے کہا کہ حکومت شریف کو بے نقاب کرنے کے لیے پوری تیاری کے بعد لاہور ہائی کورٹ سے رجوع کرے گی۔

حکومت نواز شریف کی ویڈیو لاہور ہائی کورٹ کے سامنے رکھنے پر بھی غور کر رہی ہے جس میں انہوں نے جلد ہی وطن واپسی کا اعلان کیا تھا۔ قانونی ماہرین کا خیال ہے کہ یہ قانونی کے بجائے سیاسی مسئلہ ہے۔

 ’اس بات کے امکانات کم ہیں کہ حکومت کے اس اقدام کے شریف برادران کے خلاف قانونی نتائج برآمد ہوں‘۔ تاہم حکومت سیاسی فائدہ حاصل کرنا چاہتی ہے جس کا مقصد نواز شریف کو بے نقاب کرنا ہے۔ 

گزشتہ ہفتے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا تھا کہ ہائی کورٹ کو شہباز شریف سے میڈیکل دستاویزات کے حوالے سے پوچھ گچھ کرنی چاہیے تھی جسے انہوں نے “جعلی” قرار دیا تھا۔ نواز شریف کو چار ہفتوں کے اندر واپس آنا تھا لیکن وہ دو سال گزرنے کے بعد بھی واپس نہیں آئے۔

 نومبر 2019 میں، نواز شریف نے عدالت سے منظور شدہ معاہدے پر دستخط کرنے کے بعد یہ کہہ کر ملک چھوڑ دیا تھا کہ وہ چار ہفتوں کے اندر ملک واپس آجائیں گے۔

شہباز شریف نے بھی ایک معاہدے پر دستخط کیے تھے، جس میں کہا گیا تھا کہ وہ “چار ہفتوں کے اندر اپنے بھائی کی واپسی کو یقینی بنائیں گے” یا ڈاکٹروں کی طرف سے تصدیق پر کہ وہ اپنی صحت بحال کر چکے ہیں اور پاکستان واپس آنے کے لیے موزوں ہیں۔

 میڈیکل رپورٹس کی بنیاد پر نواز شریف کو چار ہفتوں کے لیے ملک سے باہر جانے کی اجازت دی گئی۔ اس وقت، حکومت نے نواز شریف کو بیرون ملک سفر کی اجازت دینے پر رضامندی ظاہر کی تھی، اس شرط کے ساتھ کہ 7 سے 7.5 بلین روپے کے معاوضے کے بانڈز پیش کیے جائیں۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔