حمزہ علی عباسی کا آئٹم نمبر کے خلاف بیان، بیماری قرار دیا

پاکستانی اداکار حمزہ علی عباسی کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ کتنا بھی متنازعہ بیان کیوں نہ ہو اپنی رائے کے اظہار سے کبھی پیچھے نہیں ہٹتے۔ 

ایک مقامی اخبار کو انٹرویو کے دوران ، جوانی پھر نہیں آنی کے اسٹار سے اس بارے میں پوچھا گیا کہ وہ آئٹم نمبروں کے بارے میں اپنی ناپسندیدگی کے بارے میں کیا کہتے ہیں اور یہ مذہبی تعلیمات کے منافی ہے اس پر آپ کی کیا رائے ہے؟

یہ بھی پڑھیں | کیٹ مڈلٹن کو شہزادہ ہیری اور میگھن مارکل کے مداحوں نے حالیہ واقعے پر سخت باتیں کیں

حمزہ علی عباسی نے جواب دیا کہ میں آپ سے یہ پوچھتا دوں کہ اس میں کیا غلط ہوسکتا ہے جہاں ناچنے والی عورت سراسر اعتراض پر مبنی رقص کی چال چل رہی ہو؟ انہوں نے مزید کہا کہ ‘جنسی اپیل’ والے یہ گانے بچوں کے دیکھنے کے لئے آسانی سے دستیاب ہیں جس کی وجہ سے یہ بات سب سے زیادہ پریشانی کا باعث بنتی ہے۔

 انہوں نے مزید دعوی کیا کہ یہ فن کی سب سے بےہودہ شکل ہے جو صرف خواتین پر اعتراض کرنے پر انحصار کرتی ہے نیز انہوں نے آئٹم نمبر کو “بکواس” قرار دیا

اداکار حمزہ عباسی نے اپنی گفتگو جاری رکھی اور ہندوستانی ہدایتکار راجکمار ہیرانی اور ان کی مشہور فلم 3 ایڈیٹس کی مثال دی جس پر انہوں نے کہا کہ وہ “فحش گانوں” کے بغیر بھی ایک کامیاب فلم ہے۔ آپ اسکرین پر کسی عورت کا غلط برتاؤ نہیں دیکھتے ہیں اور یہ آرٹ نہیں ہے۔ یہ میری رائے ہوسکتی ہے لیکن پھر عورت کی پٹی کو آرٹ کیوں نہیں کہا جاتا ہے؟ 

 انہوں نے کہا کہ مجھے نہیں معلوم کہ ہم اس مقام پر کیوں پہنچے ہیں جہاں ہم اپنی فیملی کے ساتھ بیٹھ کر کوئی فلم نہیں دیکھ سکتے ہیں۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *