مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    جنریشن برانڈ کی ہندو دیوتا کی سوشل میڈیا پر توہین، ہندو عوام آگ بگولا

    جنریشن برانڈ کی ہندو دیوتا کی سوشل میڈیا پر توہین، ہندو عوام آگ بگولا

    فیشن برانڈ جنریشن کی ایک حالیہ سوشل میڈیا پوسٹ سپر شدید تنقید کی جا رہی ہے جس میں ہندو دیوتا کی بے عزت ترمیم شدہ تصویر پیش کی گئی ہے۔ 

    تفصیلات کے مطابق برانڈ نے ایک ملازم کی الوداعی تقریب سے ایک تصویر اپ لوڈ کی ، جہاں ملازم کے چہرے کی تصویر دیوتا کے سر کے اوپر چسپاں کی گئی تھی اور دیوتا کے ہاتھ میں سے ہر ایک سامان ، جیسے لیپ ٹاپ ، سیل فون ، ایک ہینگر پر کپڑے اور ایک کیمرہ شو کیا گیا تھا جو یہ ظاہر کرنے کے لئے تھا کہ ملازمین نے ملٹی ٹاسک کام کئے۔  یہ شبیہ ہندوؤں کے لئے توہین آمیز ہے۔

    برانڈ کی جانب سے وہ تصویر ڈلیت کر دی گئی ہے تاہم گرما گرم بحث جاری ہے۔

     اگرچہ بعد میں اس برانڈ نے معافی نامہ جاری کیا  لیکن لوگوں کو یقین نہیں آیا کہ یہ کافی ہے۔ 

    برانڈ کی جانب سے کہا گیا یے کہ ہم اپنے ناظرین کے مختلف عقائد کا احترام کرتے ہیں۔ کل ایک ایسی تصویر شائع کی گئی تھی جو ہندو برادری کے لئے توہین آمیز تھی اور ہمارا کسی کا مذہبی جذبات کی بے عزتی کرنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔ لہذا ہم ہر اس فرد سے معافی مانگتے ہیں جس کا اس پوسٹ کے باعث جذبات کو نقصان پہنچا ہے۔ 

    اپنے وضاحتی بیان میں برانڈ نے مزید کہا کہ ہم ہر روز زیادہ احترام اور خیال رکھنا سیکھ رہے ہیں۔ 

    یہ بھی پڑھیں | میڈیکل آکسیجن کی کمی کیوں ہو رہی ہے اور یہ کیسے بنتی ہے؟

    ایک ہندو ٹویٹر صارف نے لکھا کہ ہماری خوفزدہ ماں دیوی کی تصویر کشی کرنا، اس میں ترمیم کرنا وغیرہ اس برانڈ کی طرف سے اس طرح کی بے شرم حرکت سامنے آرہی ہے!

     ایک ٹویٹر صارف نے سوال کیا کہ اگر کسی دوسرے مذہب کے ساتھ بھی اسی طرح کی بےحرمتی کی گئی تو کیا غم و غصہ ایک ہی ہوگا۔ مذہبی وابستگی سے قطع نظر ہمیں ایک دوسرے کا احترام کرنا چاہئے۔ یہ دل کی بات ہے کہ ایک برانڈ مذہبی منافرت میں ملوث پایا جاتا ہے۔ کیا یہاں کوئی بعد میں معافی کے تصور کو جواز بنا سکتا ہے؟ 

      انسانی حقوق کے کارکن کپل دیو نے کہا کہ حیرت ہے کہ کیا معافی مانگنا ہی صرف کافی ہے؟

     ایک اور ٹویٹر صارف نے حیرت کا اظہار کیا کہ مذہب کو لطیفے میں کیوں لایا جارہا ہے۔  بحیثیت پاکستانی اور انسان ، جب ہمیں کسی بھی مذہب کی توہین ہوتی ہے تو ہمیں مشتعل ہونا چاہئے۔ یہ کہ ایک مقامی برانڈ جو خود کو تنوع اور شمولیت پر فخر کرتا ہے اس نے مایوس کیا کیوں کہ اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہم دوسرے لوگوں کے مذاہب کا کتنا کم احترام کرتے ہیں۔

     کسی کے مذہب کو آپ کے لطیفے کا بٹ نہیں بننا چاہئے اور ہماری خواہش ہے کہ لوگ زیادہ احترام کرنا سیکھیں۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x