جمعہ: قومی اسمبلی کا اجلاس تحریک عدم اعتماد کے بغیر ملتوی

وزیر اعظم عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پر پاکستان کی قومی اسمبلی کا اہم اجلاس جمعہ کو حزب اختلاف کے قانون سازوں کے شدید احتجاج کے باوجود قرارداد پیش کیے بغیر ملتوی کر دیا گیا۔

 قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر نے کہا کہ 14 فروری کو پاکستان تحریک انصاف کے رکن اسمبلی خیال زمان کے انتقال کے باعث اجلاس 28 مارچ کی شام 4 بجے تک ملتوی کر دیا گیا۔

پاکستان کے پارلیمانی کنونشنز کے مطابق، کسی قانون ساز کی موت کے بعد پہلی نشست مرحوم کی روح کے لیے دعا اور ساتھی قانون سازوں کی جانب سے خراج تحسین پیش کرنے تک محدود ہے۔ 

قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف، پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور شریک چیئرمین آصف علی زرداری سمیت اپوزیشن کے کئی اہم ارکان جمعہ کے روز پارلیمنٹ ہاؤس میں موجود تھے۔ 

سپیکر قیصر کے اجلاس ملتوی کرتے ہی اپوزیشن لیڈروں نے احتجاج شروع کر دیا اور ان سے تحریک التوا اٹھانے کی درخواست کی لیکن سپیکر نے مائیک آن نہیں کیا اور اپنے چیمبر میں چلے گئے۔ 

 سپیکر نے کہا کہ تحریک عدم اعتماد لانے کا فیصلہ آئندہ اجلاس میں کیا جائے گا۔ 

 قواعد کے مطابق قرارداد پر ووٹنگ قومی اسمبلی میں پیش کیے جانے کے کم از کم تین سے سات دن بعد ہونی چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں | لڑکی پر تشدد: ملزم عثمان مرزا سمیت 5 افراد کو عمر قید کی سزا

 جمعرات کو قومی اسمبلی سیکرٹریٹ نے قومی اسمبلی کے اجلاس کے لیے 15 نکاتی ‘آرڈرز آف دی ڈے’ جاری کیا تھا جس میں عدم اعتماد کی قرارداد بھی شامل تھی۔

 پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے رہنما خواجہ آصف نے ٹویٹ کیا کہ اپوزیشن کے 163 قانون سازوں میں سے 159 ایوان میں موجود تھے۔ یہ واضح نہیں تھا کہ حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے کتنے قانون ساز اجلاس میں شریک ہوئے۔

 اجلاس ملتوی ہونے کے فوری بعد پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر پریس کانفرنس کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے خبردار کیا کہ اگر پیر کو تحریک عدم اعتماد پیش نہ ہونے دی گئی تو آئندہ جو ہوگا اس کے ذمہ دار وہ نہیں ہوں گے۔ 

اسد قیصر نے قومی اسمبلی کے اسپیکر کے بجائے پی ٹی آئی کے کارکن کے طور پر کام کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر اسد قیصر نے (عمران خان کے غلام) کے طور پر کام کرنے کی کوشش کی تو اپوزیشن قانونی اور آئینی احتجاج کا سہارا لے گی۔

 انہوں نے اسپیکر کے خلاف آئین کے آرٹیکل 6 کے تحت مقدمہ چلانے کا مطالبہ بھی کیا جو کہ سنگین غداری سے متعلق ہے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ تحریک عدم اعتماد ہمارا جمہوری ہتھیار بننے جا رہا ہے۔ ہم آزادانہ اور منصفانہ انتخابات کی طرف بڑھیں گے۔ بلاول بھٹو نے مزید کہا کہ وزیر اعظم اپنی اکثریت اور حکومت کھو چکے ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں