ثناء جاوید تنازعے کے پیچھے اصل وجہ سامنے آ گئی

پاکستانی میک اپ آرٹسٹ سید حسین نے اداکارہ ثنا جاوید سے متعلق تنازع کے پیچھے کی اصل کہانی پر روشنی ڈالنے کی کوشش کی ہے جس نے حال ہی میں انٹرنیٹ پر طوفان برپا کر رکھا ہے۔ 

اگرچہ اس بات کی تصدیق نہیں کی جا سکتی کہ اصل حقائق کون بیان کر رہا ہے، لیکن یہ ضروری ہے کہ سب کا نقطہ نظر بتایا جائے۔

سید حسین نے اپنے سوشل میڈیا ہینڈل پر بات کی ہے اور بتایا ہے کہ ثنا جاوید اور ماڈل منال سلیم کی لڑائی دراصل کیسے شروع ہوئی۔ نیز، مرد میک اپ گرو نے دونوں خواتین کے درمیان ہونے والے تمام واقعات کے عینی شاہد ہونے کا دعویٰ کیا ہے۔ 

سید حسین نے اپنی تفصیلی سوشل میڈیا اپڈیٹ میں جو کہا ہے وہ یہ ہے کہ محترم قارئین، میں یہاں موجودہ صورت حال پر ایک باضابطہ بیان دینے آیا ہوں جو ماڈل منال سلیم اور اداکارہ ثنا جاوید کے حوالے سے پورے سوشل میڈیا پر ایک ناپسندیدہ ہائپ پیدا کر رہا ہے۔ میں ان دونوں مشہور شخصیات کے لیے واحد میک اپ آرٹسٹ تھا جس دن یہ واقعہ پیش آیا اور ساتھ ہی اس کا چشم دید گواہ بھی۔ انہوں نے مزید لکھا کہ میں سچ کے ساتھ کھڑا ہوں جو کہ صرف ایک میک اپ آرٹسٹ تھا اور ان کے میک اپ کے لیے اور شوٹنگ کے دوران صرف ایک کمرہ تھا۔ منال سب سے پہلے شوٹ پر آئی اور میں اس کا میک اپ کر رہی تھا جب ثنا آئی اور منال کو کمرے سے ہٹانے کو کہا۔ منال چلی گئی اور میری اسسٹنٹ نے اس کی شکل مکمل کی۔ شوٹ کے درمیان میں ثنا نے منال کے شاٹس میں خلل ڈالا جس پر منال نے احتجاج کیا اور ثنا نے سخت الفاظ میں جواب دیا۔ اور ہاں میں نے سنا ہے کہ ثنا نے اپنے مینیجر کو کال پر فون کیا تھا “مٹ بلایا کرو مجھے دو تکے کے ماڈلز کے ساتھ شوٹ کرنے کے لئے”

یہ بھی پڑھیں | انڈین میزائل کا پاکستان آنا “غلطی” کے سوا کچھ نا تھا، امریکہ  

سید حسین نے آخر میں کہا کہ اس انڈسٹری کا حصہ ہونے کے ناطے میں اس طرح کے رویوں کی سختی سے مذمت کرتا ہوں، چاہے وہ کسی جونیئر آرٹسٹ کے ہوں یا کسی مشہور شخصیت کے۔ کسی کو حق نہیں پہنچتا کہ وہ اپنے گھٹیا فقروں سے کسی کی تذلیل کرے یا اپنے غیر مہذب رویے سے کسی کی تذلیل کرے۔

 ثناء جاوید کی بدتمیزی کے حوالے سے شوبز ستاروں کی جانب سے جس طرح کے انکشافات سامنے آرہے ہیں وہ خوفناک ثابت ہوئے ہیں اور اس کی وجہ سے نامور پاکستانی اسٹار نے ان پر غنڈہ گردی کا الزام لگانے والے لوگوں کے خلاف قانونی کارروائی کی ہے۔ تاہم کسی کو یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ ایک کہانی کے ہمیشہ کئی رخ ہوتے ہیں اس لیے کوئی بھی حقیقت کے بغیر کسی صورت حال کا فیصلہ نہیں کر سکتا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں