تین سالوں میں ریاست مدینہ کے لئے کیا کچھ کیا؟ وزیر اعظم عمران خان کا کالم

وزیر اعظم عمران خان نے اپنے کالم میں لکھا ہے کہ ہر تہذیب کا مرکز اس کے روحانی اصول ہیں۔ جب وہ مرتے ہیں تو تہذیب مر جاتی ہے۔ اسلامی تہذیب میں ہمارے روحانی اصولوں کا ظہور رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے مدینہ میں ہوا۔ ان اصولوں میں انصاف، قانون کی حکمرانی، اتحاد ، علم اور تعمیراتی کام تھے۔

 نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ لوگو جو تم سے پہلے گزرے وہ اس لیے ہلاک ہوئے کہ اگر ان میں سے کوئی بڑا آدمی چوری کرتا تو اسے چھوڑ دیتے اور اگر کوئی کم درجہ کا شخص چوری کرتا تو اس پر عذاب نازل کرتے۔ خدا کی قسم اگر محمد (علیک السلام) کی بیٹی فاطمہ بھی چوری کرتی تو میں اس کا ہاتھ کاٹ دیتا۔ [صحیح مسلم 1688] 

 وزیر اعظم نے تین سال میں ریاست مدینہ کے لئے کیا کچھ کیا؟ اس کا جواب عمران خان نے کام کے آخری حصہ میں کچھ یوں دیا ہے:

ہم نے کچھ عظیم اقدامات کے ساتھ پاکستان کو فلاحی ریاست کی راہ پر گامزن کیا ہے۔ سخت مالی وسائل کے باوجود، ہم نے اپنے اقدامات جیسے کہ 2019 میں شروع کیے گئے احساس پروگرام کے لیے بے مثال رقم مختص کی۔ احساس پروگرام ایک سماجی تحفظ اور غربت کے خاتمے کا پروگرام ہے جو معاشرے کے کمزور گروہوں کے لیے ضروری ہے۔ یہ ایک ایسی ریاست کی تعمیر کے لیے ہمارے اہم اقدامات میں سے ایک تھا جو ہمارے شہریوں کی فلاح و بہبود کا خیال رکھتی ہو۔ اب تک، پاکستان کی تاریخ کے سب سے بڑے پروگراموں میں سے ایک صحت سہولت پروگرام ہے جو ہمارے شہریوں کو یونیورسل ہیلتھ کوریج فراہم کرتا ہے۔ یہ صرف کمزور گھرانوں کو غربت میں ڈوبنے سے بچانے کے لیے نہیں ہے جو اکثر طبی علاج کے لیے رقم لیتے ہیں، بلکہ یہ پورے ملک میں نجی شعبے کے اسپتالوں کے نیٹ ورک کا باعث بنتا ہے، اس طرح اس شعبے میں عوام کے ساتھ ساتھ نجی شعبوں دونوں کو فائدہ ہوتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | اپوزیشن کے شدید احتجاج کے باوجود حکومت منی بجٹ پاس کروانے میں کامیاب 

 صرف پنجاب حکومت نے اس کے لیے 400 ارب روپے مختص کیے ہیں۔ صحت سہولت پروگرام ہماری سماجی بہبود کی اصلاحات کے لیے ایک اہم سنگ میل ہے۔ یہ اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ پاکستان میں کچھ کم آمدنی والے لوگوں کو  طبی صحت کی دیکھ بھال تک رسائی حاصل ہو سکتی ہے۔ 

کووڈ کے بعد کے دور میں عالمی معاشی مشکلات کے تناظر میں، ہم نے تیزی سے بدلتے ہوئے تعلیمی میدان کو نظرانداز نہیں کیا۔ ہمارا احساس اسکالرشپ پروگرام اس بات کو یقینی بنائے گا کہ معاشرے کے پسماندہ اور غریب طبقے کے ہونہار طلباء کو باوقار تعلیم حاصل کرنے کا موقع ملے گا جس سے ان کے بہتر ذریعہ معاش حاصل کرنے کے امکانات بڑھ جائیں گے۔ یہ پروگرام ہمارے دیگر تمام اسکالرشپس کے ساتھ ملا کر 47 ارب روپے کے ساٹھ لاکھ اسکالرشپس بنتا ہے۔ یہ بھی پاکستان کی تعلیمی تاریخ میں بے مثال ہے۔

 آخر میں، میں اس بات کا اعادہ کروں گا کہ ہمارے ملک کو اس وقت درپیش تمام چیلنجوں میں سب سے زیادہ ضروری قانون کی حکمرانی کے قیام کی جدوجہد ہے۔ پاکستان کی تاریخ کے گزشتہ 75 سالوں میں ہمارا ملک اشرافیہ کی گرفت کا شکار رہا ہے جہاں طاقتور اور بدمعاش سیاست دان، کارٹلز اور مافیاز کرپٹ نظام کے ذریعے حاصل کردہ اپنی مراعات کے تحفظ کے لیے قانون سے بالاتر ہونے کے عادی ہو چکے ہیں۔ اپنی مراعات کا تحفظ کرتے ہوئے انہوں نے ریاستی اداروں کو خراب کیا ہے، خاص طور پر ریاست کے وہ ادارے جو قانون کی حکمرانی کو برقرار رکھنے کے ذمہ دار ہیں۔ ایسے افراد، کارٹلز اور مافیاز طفیلی ہیں جو ہمارے ملک کے وفادار نہیں ہیں اور پاکستان کی حقیقی صلاحیتوں کو بے نقاب کرنے کے لیے انہیں شکست دینا بہت ضروری ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔